انڈیا کا 7 رینجرز ہلاک کرنے کا دعویٰ، پاکستان کی تردید

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

انڈیا کی سرحدی فورس بی ایس ایف نے دعویٰ کیا ہے اس نے جموں خطے میں ایک کارروائی میں پاکستانی سرحدی فورس رینجرز کے سات اہلکاروں کو ہلاک کر دیا ہے۔

دوسری جانب پنجاب رینجرز کے ترجمان میجر وحید نے بی بی سی کے نامہ نگار ذیشان ظفر سے بات کرتے ہوئے بی ایس ایف کے اس دعوے کو مسترد کیا اور کہا کہ ایسا کوئی واقعہ پیش نہیں کیا ہے۔

انھوں نے انڈین دعوے کے حوالے سے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ اس طرح کے دعوے کرنا ان کی عادت بن گئی ہے۔

دہلی سے نامہ نگار شکیل اختر کے مطابق بی ایس ایف کی جانب سے جاری ہونے والے بیان کے مطابق یہ کارروائی جموں کے ہیرا نگر سکٹر میں جمعہ کی صبح پاکستانی رینجرز کی طرف سے ایک سنائپر حملے کے بعد کی گئی۔

اس بیان میں دعویٰ کیا ہے کہ پاکستانی ذرائع سے ملنے والی اطلاعات کے مطابق وہاں کی خبروں میں رینجرز نے پانچ رینجرز کی ہلاکتوں کا اعتراف کیا ہے۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ 19 اور 20 اکتوبر کی درمیانی شب ہیرا نگر سکٹر کے بوبیاں گاؤں کے علاقے میں دراندازی کی کوشش کی گئی تھی۔ جوابی کارروائی میں ایک شدت پسند مارا گیا۔

بی ایس ایف کا کہنا ہے کہ جمعے کی صبح بین الاقوامی سرحد پر اسی علاقے میں پاکستانی رینجرز نے بی ایس ایف کی گشتی ٹکڑی کو نشانہ بنایا۔ رینجرز کی فائرنگ میں ایک کانسٹیبل زخمی ہوا ہے جس کی حالت نازک بتائی گئی ہے۔

جوابی فائرنگ میں پاکستان کے سات رینجرز مارے گئے اور واقعے کے بعد سکیورٹی انتظامات کو مزید سخت کر دیا گیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption پنجاب رینجرز نے اس دعوے کی تردید کی ہے

اس سے پہلے پاکستان کی سرکاری خبر رساں ایجنسی اے پی پی نے رینجرز حکام کے حوالے سے بتایا ہے کہ انڈین سکیورٹی فورس بی ایس ایف نے شکر گڑھ اور بجوات سیکٹرز میں ورکنگ باؤنڈری پر بلااشتعال فائرنگ کی۔

رینجرز حکام کے مطابق بی ایس ایف نے ہلکے اور بھاری ہتھیاروں سےشہری آبادی کو نشانہ بنایا جبکہ اس میں کسی جانی نقصان کی اطلاع نہیں ملی ہے۔

اس واقعے سے پہلے پاکستانی فوج کے شبعہ تعلقاتِ عامہ کی جانب سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کشمیر کو تقسیم کرنے والی لائن آف کنٹرول پر انڈین فوج کی جانب سے فائر بندی کی خلاف ورزی کرتے ہوئے کیرالا سیکٹر میں فائرنگ کی گئی۔

خیال رہے کہ انڈین کے زیرانتظام کشمیر کے علاقے اوڑی میں فوجی کیمپ پر حملے اور اس کے بعد انڈیا کا پاکستان کے زیرانتظام کشمیر میں سرجیکل سٹرائیکس کے دعوے کے بعد دونوں ممالک کے درمیان پہلے سے کشیدہ تعلقات مزید تلخ ہو گئے ہیں۔

دونوں جانب سے اس واقعے کے بعد ایل او سی پر فائر بندی کے خلاف ورزیوں کے الزامات عائد کیے جا رہے ہیں۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں