جموں میں انڈین فوجی کیمپ پر حملہ، دو افسران سمیت سات ہلاک

جموں تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption کرنل مہتا نے دو فوجیوں کے زخمی ہونے کی تصدیق کی

انڈیا کے زیرانتظام کشمیر کے جنوبی خطے جموں میں انڈین فوج کی شمالی کمان کے ایک کیمپ پر مسلح افراد کے حملے میں دو افسران سمیت سات فوجی ہلاک ہو گئے ہیں۔

انڈین فوج کے ترجمان کرنل منیش مہتا نے کہا کہ'فوجی کیمپ میں كومبنگ آپریشن جاری ہے جو صرف رات کے وقت رکا ہے۔ پورے علاقے کا محاصرہ کیا گیا ہے اور بدھ کو بھی كومبنگ آپریشن جاری رہے گا۔

انڈین فوجی کیمپ پر حملہ، دو افسران سمیت سات ہلاک

کشمیر کے جنگی ماحول میں ضبط کی مجبوری

یہ گذشتہ دو ماہ کے دوران بھارتی فوج کے کسی ٹھکانے پر اپنی نوعیت کا یہ تیسرا بڑا حملہ ہے۔

انڈین فوج کی جانب سے جاری ہونے والے بیان کے مطابق منگل کی صبح پولیس کی وردیوں میں ملبوس مسلح حملہ آوروں نے نگروٹہ میں کور ہیڈکوارٹر سے تین کلومیٹر کے فاصلے پر تعینات فوجی یونٹ پر دھاوا بولا۔

حملہ آور دستی بم پھینکتے ہوئے اور فائرنگ کرتے ہوئے آفیسرز میس میں داخل ہوگئے۔

بیان کے مطابق ابتدائی جھڑپ میں ایک فوجی افسر اور تین اہلکار ہلاک ہوئے اور حملہ آور اس دوران دو ایسی عمارتوں میں داخل ہونے میں کامیاب رہے ہیں جہاں فوجی اہلکار اور ان کے اہلِ خانہ موجود تھے۔

بیان میں کہا گیا ہے حملہ آوروں نے وہاں موجود 12 فوجیوں، دو خواتین اور دو بچوں کو یرغمال بنا لیا۔

فوج کا کہنا ہے کہ تمام یرغمالیوں کو بحفاظت بازیاب کروا لیا گیا تاہم بازیابی کے لیے کیے گئے آپریشن میں مزید ایک فوجی افسر اور دو اہلکار مارے گئے۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption بازیابی کے لیے کیے گئے آپریشن میں مزید ایک فوجی افسر اور دو اہلکار مارے گئے

انڈین فوج کے مطابق مقابلے میں تینوں حملہ آور بھی مارے گئے اور اب علاقے کو کلیئر کرنے کے لیے آپریشن جاری ہے۔

خیال رہے کہ نگروٹہ میں ہی بھارتی فوج کی سب سے زیادہ سرگرم شمالی کمان کا ہیڈکوارٹر قائم ہے۔

یہ حملہ 166 میڈیم ریجمنٹ آرٹلری کے کیمپ پر کیا گیا۔ اسی یونٹ میں پاکستان کے ساتھ لگنے والی لائن آف کنٹرول اور ورکنگ باونڈری پر مبینہ دراندازی کے خلاف منصوبہ بندی بھی ہوتی ہے۔

اس حملے کے بعد نگروٹہ میں فوجی تنصیبات کے قریب گاڑیوں کی آمدورفت روک دی گئی اور انتظامیہ نے سکولوں میں تعطیل کا اعلان کر دیا گیا۔

اس دوران انڈین سرحدی حفاظتی فورس یا بی ایس ایف نے دعویٰ کیا ہے کہ اس نے جموں میں ہی سامبا ضلع کے رام نگر اور چملی یال سیکٹر کے قریب تین مسلح دراندازوں کو ایک تصادم کے دوران ہلاک کیا۔

تصادم میں ایک بی ایس ایف جوان زخمی ہوگیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption یہ حملہ جموں کے نگروٹہ قصبے میں ہوا ہے

واضح رہے ستمبر میں شمالی کشمیر کے اُوڑی قصبہ میں فوجی کیمپ پر مسلح حملے میں 19فوجیوں کی ہلاکت کے بعد انڈیا اور پاکستان کے درمیان سرحدی اور سفارتی کشیدگی بڑھ گئی ہے۔

اس حملے کے دس روز بعد انڈین فوج نے پاکستانی زیرانتظام کشمیر کے اندر سرجکل سٹرائیکس کرکے مسلح شدت پسندوں کے ٹھکانوں کو تباہ کرنے کا دعویٰ بھی کیا تھا۔ تاہم اس دعوے کے بعد لائن آف کنٹرول اور دوسری سرحدوں پر دونوں ملکوں کے درمیان تصادموں میں شدت آ گئی۔

انڈین فوج کا کہنا ہے کہ سرجکل سٹرائیکس کے بعد سے اب تک پاکستان نے سو سے زائد مرتبہ سیز فائر معاہدے کی خلاف ورزی کی ہے جس میں 17فوجیوں سمیت 30 افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں