جے للیتا کے وفادار او پنیر سیلوم تمل ناڈو کے وزیر اعلیٰ بن گئے

او پنیر سیلوم تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption او پنیر سیلوم کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ انھوں نے اپنی چائے کی دکان سے فرصت نکال کر گریجویشن تک کی تعلیم حاصل کی

انڈیا کی جنوبی ریاست تمل ناڈو کی وزیر اعلیٰ جے للیتا کے انتقال کے بعد ان کے وفادار کہے جانے والے سینيئر رہنما او پنیر سیلوم نے منگل کی صبح نئے وزیر اعلیٰ کے طور پر حلف لیا ہے۔

وہ اس سے قبل ریاست کے وزیر خزانہ کا عہدہ سنبھال رہے تھے۔ انھوں نے ریاست کے 19 ویں وزیر اعلیٰ کے طور پر حلف لیا ہے۔

٭ انڈین ریاست تمل ناڈو کی وزیراعلیٰ جے للیتا انتقال کر گئیں

٭ جے للیتا کا آخری کردار

جیسے ہی چینئی کے آپولو ہسپتال نے جے للیتا کی وفات کی تصدیق کی، ان کی پارٹی آل انڈیا انّا دڑاوڈ منّیتر کزگم (اے آئی اے ڈی ایم کے) کے رکن اسمبلی نے اتفاق رائے سے پنیر سیلوم کو اپنا نیا رہنما منتخب کر لیا۔

چینئی سے صحافی عمران قریشی نے بتایا کہ انھیں یہ ذمہ داری سونپنے پر شاید ہی کسی کو حیرانی ہوئی ہو کیونکہ وہ پہلے بھی دو بار جے للیتا کے جیل جانے کی صورت میں ان کی ذمہ داریاں سنبھال چکے ہیں۔

انھوں نے یہ بھی بتایا کہ ابھی پارٹی کی صدارت کی ذمہ داری پر اتفاق نہیں ہوا ہے اور اس کے بارے میں بعد میں اعلان کیا جائے گا۔ تاہم بعض حلقوں میں اس بات پر اتفاق ہے کہ یہ ذمہ داری بھی پنیر سیلوم ہی نبھائیں گے۔

پہلی بار پنیرسیلوم نے سنہ 2001 اور 2002 کے دوران اس وقت وزیر اعلیٰ کا عہدہ سنبھالا جب قانونی وجوہات پر جے للیتا اس عہدے کی ذمہ داری نہیں پوری سکتی تھیں اور دوسری بار سنہ 15-2014 میں انھوں نے یہ ذمہ داری اٹھائی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption 65 سالہ پنيرسیلوم نے ریاست کے 19 ویں وزیر اعلیٰ کے طور پر حلف لیا ہے

دراصل پنيرسیلوم جے للیتا کے سب سے زیادہ وفادار ساتھی مانے جاتے ہیں اور جے للیتا کے بیمار پڑنے کے بعد سے ہی وہ ان کی جگہ سرکاری ذمہ داری نبھا رہے تھے۔

65 سالہ پنيرسیلوم کے بارے میں کچھ باتیں اقتدار کی راہداریوں میں طویل عرصے سے کہی سنی جاتی رہی ہیں۔

انڈیا کے وزیر اعظم نریندر مودی کی طرح پنيرسیلوم نے بھی چائے بیچی ہے۔ جبکہ ان کے والد اپنے زمانے میں پارٹی کے وفادار تھے۔

پنيرسیلوم کے والد ’انّا ڈی ایم کے‘ کے بانی ایم جی رام چندرن کے لیے کام کرتے تھے اورایم جی آر تبھی سے ان پر مہربان تھے۔

پنیر سیلوم نے سیاست میں قدم رکھنے کے بعد اپنی چائے کی دکان اپنے بھائی کے حوالے کردی اور ان کے بھائی آج بھی پیرياكولم میں چائے کی دکان چلاتے ہیں۔ بہر حال ان کا خاندانی پیشہ کاشتکاری اور ڈیئری کا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Others
Image caption پنیر سیلوم اس سے قبل دو بار جے للیتا کی غیرموجودگی میں وزیر اعلی کی ذمہ داریاں نبھا چکے ہیں

پنيرسیلوم کے بارے میں یہ کہا جاتا ہے کہ چائے کی دکان سے فرصت نکال کر انھوں نے گریجویشن کی اور اس کا علم ایم جی آر کو بھی تھا۔

پنيرسیلوم پہلی بار ششی کلا کے رشتہ دار ٹی ٹی كے دناكرن کے حوالے سے جے للیتا کی نظر میں آئے۔

کہا جاتا ہے کہ وزیر اعلیٰ کے عہدے پر رہتے ہوئے پنيرسیلوم کبھی بھی اس کرسی پر نہیں بیٹھے جس پر جے للیتا بیٹھا کرتی تھیں اور وہ ان کی غیر موجودگی میں ان کی تصویر سامنے رکھتے تھے۔

پنيرسیلوم کا تھیور برادری سے تعلق ہے اور جنوبی تمل ناڈو میں اس برادری کو بااثر تصور کیا جاتا ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں