چپل پر مہاتما گاندھی کی تصویر، ایمازون مشکل میں

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images

آن لائن سامان بیچنے والی بین الاقوامی کمپنی ایمازون نے مہاتما گاندھی کی شکل سے مزین ہوائی چپل پر شدید تنقید کے بعد اپنی ویب سائٹ سے ہٹا دی ہیں۔

مہاتما گاندھی نے انگریزوں کی حکومت سے انڈیا کو آزاد کروانے کے لیے مہم چلائی تھی اور وہ انڈیا میں بابائے قوم کی حیثیت سے جانے جاتے ہیں۔

انڈیا کی وزارتِ خارجہ کی جانب سے واشنگٹن میں انڈین سفارت خانے کو پیغام بھیجا گیا ہے کہ وہ ایمازون کو انڈیا کی عوام کے جذبات کو ٹھیس ہنچانے سے روکیں۔

انڈین نیوز چینل این ڈی ٹی وی کے مطابق انڈین وزارتِ خارجہ کے ترجمان وکاس سواروپ نے کہا کہ 'انڈین جھنڈے والے ڈور میٹ کے واقعے کے بعد امریکہ میں موجود سفیر کو پیغام دیا گیا ہے کہ وہ ایمازون کو انڈین عوام کے جذبات اور احساسات کو مد نظر رکھتے ہوئے انہیں مجروح کرنے سے روکیں۔'

انڈین حکومت کے سیکریٹری برائے معاشی امور شکتی کانتا داس نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹ پر اپنے غصے کا اظہار کیا اور کہا کہ ایمازون انڈیا کے اہم علامات اور نشانات کے بارے میں ایسے خطرے مول لینے سے پہلے سوچ لے۔

تصویر کے کاپی رائٹ @DASSHAKTIKANTA

انھوں نے مزید کہا کہ وہ بحیثیت ایک شہری اپنے خیالات کا اظہار کر رہے تھے، نہ کہ اپنی سرکاری حیثیت میں۔

چند روز قبل ایمازون کو ایک اور تنازع کا سامنا اس وقت کرنا پڑا تھا جب کمپنی نے اپنی ویب سائٹ پر انڈین پرچم والے ڈور میٹ فروخت کے لیے پیش کیے۔

تصویر کے کاپی رائٹ @OYERJALOK

انڈین وزیر خارجہ سشما سوراج کی جانب سے اس پر سخت تنقید کی گئی تھی جس کے بعد ایمازون نے اپنی ویب سائٹ سے اس پراڈ کٹ کو ہٹانے کا اعلان کیا تھا اور معافی بھی مانگی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ @AMITDHIMAN_

انڈیا میں کمپنی کے نائب صدر امت اگروال نے ایک بیان میں کہا تھا کہ ان کی کمپنی انڈین قوانین اور روایات کے احترام کے لیے پر عزم ہے۔

ان کا کہنا تھا: ’ایمازون نے نہیں بلکہ ایک تیسری پارٹی نے اس کی فروخت کے لیے کینیڈا میں انھیں سائٹ پر لسٹ کیا تھا، ایمازون کو اس پر افسوس ہے۔ انڈین جذبات کو ٹھیس پہنچانے کی ہماری قطعی کوئی نیت نہیں تھی۔‘

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں