’ماؤنٹ ایورسٹ کی پیمائش میں انڈیا شامل نہیں ہوگا‘

ماؤنٹ ایورسٹ تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption کچھ سائنسدانوں کا خیال ہے شاید ماؤنٹ ایورسٹ کی بلندی میں کمی آئی ہے

نیپال کا کہنا ہے کہ ماؤنٹ ایورسٹ کی دوبارہ پیمائش کے لیے مہم میں انڈیا کے حکام کی شمولیت کا کوئی فیصلہ نہیں کیا گیا ہے۔

نیپال کے سروے ڈیپارٹمنٹ کے ایک اعلیٰ اہلکار نے بی بی سی کو بتایا کہ ان کے ملک نے انڈیا کی شمولیت کی حامی نہیں بھری، جوکہ سروے آف انڈیا کے دعوے کے برعکس ہے۔

اعلیٰ اہلکار کا کہنا تھا کہ نیپال ماؤنٹ ایورسٹ کی پیمائش خود کرنا چاہتا ہے۔

اس سے قبل سروے آف انڈیا نے اعلان کیا تھا کہ دنیا کی بلند ترین چوٹی ماؤنٹ ایورسٹ کی دوبارہ پیمائش کے ذریعے یہ معلوم کرنے کی کوشش کی جائے گی کہ آیا دو سال قبل نیپال میں آنے والے زلزلے سے اس کی اونچائی میں کوئی تبدیلی آئی ہے یا نہیں۔

* ماؤنٹ ایورسٹ کے قریب جھیلوں کا'خطرناک'حد تک پھیلاؤ

* ماؤنٹ ایورسٹ پر انسانی فضلے کا پہاڑ

* ماؤنٹ ایورسٹ پر کوہ پیمائی کے راستے کی تبدیلی

سرویئر جنرل سورنا سوابا راؤ کا کہنا ہے کہ اس مقصد کے لیے آئندہ دو ماہ میں ایک مہم نیپال اور چین کی سرحد پر واقع اس چوٹی پر بھیجی جائے گی۔

کچھ سائنسدانوں کے مطابق یہ ممکن ہے کہ دو سال قبل نیپال میں آنے والے 7.8 شدت کے زلزلے کے بعد ماؤنٹ ایورسٹ کی بلندی میں کمی آئی ہو، تاہم بعض کا خیال ہے کہ اس میں اضافہ ہوا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

اس سے پہلے چین کی ایک سرکاری رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ یہ پہاڑ اس زلزلے کے بعد جنوب مغرب کی جانب کم از کم تین سینٹی میٹر سرکا ہے۔

اس کی بلندی 8848 میٹر یعنی 29028 فٹ بتائی جاتی ہے، جو 62 سال قبل انڈین سروے میں بتائی گئی تھی۔

انڈین سرویئر جنرل کا کہنا تھا کہ اس مرتبہ اس کی پیمائش کے لیے زمینی سروے اور جی پی ایس کی مدد درکار ہوگی تاکہ اس پہاڑ میں چند سینٹی میٹر کی بھی کسی ممکنہ تبدیلی کو ناپا جاسکے گا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

اسی بارے میں