آ‎سٹریلیا اور انڈونیشیا میں فوجی تعلقات پھر سے بحال

ٹرن بل، ودودو تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption آسٹریلیا کے وزیر اعظم میلکم ٹرنبل انڈونیشیا کے صدر جوکو ودودو کی موجودگی میں اس کا اعلان سڈنی میں کیا

آسٹریلیا اور انڈونیشیا کے رہنماؤں نے دو ماہ کے تعطل کے بعد دوبارہ سے اپنے فوجی تعلقات بحال کرنے کا اعلان کیا ہے۔

انڈونیشیا نے آ‎‎سٹریلیا کے ایک فوجی اڈے پر قابل اعتراض تدریسی مواد پر احتجاج کرتے ہوئے اس کے ساتھ اپنے فوجی تعاون کو معطل کر دیا تھا۔

اس مواد میں مبینہ طور پر انڈونیشیا کے بنیادی اصولوں کا مذاق اڑآیا گيا تھا۔

آسٹریلیا کے وزیر اعظم میلکم ٹرنبل انڈونیشیا کے صدر جوکو ودودو کی موجودگی میں اس کا اعلان سڈنی میں کیا۔

آسٹریلوی وزیراعظم نے اخباری کانفرنس میں اعلان کرتے ہوئے کہا: 'صدر ودودو اور میں نے، تربیتی تبادلے اور دیگر سرگرمیوں سمیت، مکمل فوجی تعاون بحال کرنے پر اتفاق کیا ہے۔'

انڈونیشیا کے صدر آ‎سٹریلیا کے اپنے پہلے دورے پر آئے ہوئے ہیں۔ انھوں امید ظاہر کی کہ دونوں ملکوں کے درمیان آزادانہ تجارت کا معاہدہ بھی اسی برس تک طے پا جائے گا۔

انھوں نے کہا: 'میں نے وزیراعظم سے بعض کلیدی مسائل پر بات چيت کی ہے اس میں سے پہلی بات تجارتی رکاوٹیں دور کرنے سے متعلق ہے۔

اطلاعات کے مطابق آ‎سٹریلیا کی فوج نے مبینہ طور پر انڈونیشیا کے بنیادی اصول و ضوابط کی مذمت کی تھی جس پر بطور احتجاج انڈونیشیا نے فوجی تعاون معطل کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔

آسٹریلیا کے جس مواد پر تنازع ہوا اس میں انڈونیشیا کے بنیادی اصول 'پانک سلا' اور اس کی فوج کا مذاق اڑایا گیا تھا۔

پانک سلا کا مطلب پانچ بنیادی اصول ہیں۔ یہ وہ اصول ہے جس کی بنیاد پر انڈونیشیا کا آئین مرتب ہے۔ اس کے تحت ملک میں ہر شخض کا مذہبی ہونا ضروری ہے جبکہ لادینیت غیر قانونی ہے۔

اس سے قبل اسی ماہ انڈونیشیا کے فوجی سربراہ نے پرتھ میں کہا تھا کہ آسٹریلیا نے اس بارے میں معذرت کی ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں