قبرستان کی ضرورت نہیں، سب مُردوں کو جلانا چاہیے: ساکشی مہاراج

شمشان گھاٹ تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption لوگ کہاں رہیں گے اگر تمام زمین پر قبرستانوں کی تعمیر کے لیے استعمال کی جائے گی: ساکشی مہاراج

انڈیا کی حکمراں جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی کے رکن پارلیمان ساکشی مہاراج نے کہا ہے کہ ملک میں کوئی بھی قبرستان نہیں ہونا چاہیے اور تمام افراد کے جسدخاکی کو نذر آتش کرنا چاہیے۔

انڈین اخبار ہندوستان ٹائمز کے مطابق ریاست اترپردیش کے شہر اناؤ سے منتخب ہونے والے رکن پارلیمان ساکشی مہاراج کا کہنا تھا کہ ’وزیراعظم نریندر مودی نے کہا تھا کہ ایک قبرستان کے ساتھ شمشان گھاٹ تعمیر کیا جائے گا۔ لیکن قبرستان بالکل تعمیر نہیں ہونے چاہییں۔ اگر ایسا ہوتا ہے تو ملک کی تمام زمین اسی مقصد کے استعمال ہو گی اور کاشتکاری کے لیے کوئی جگہ نہیں بچے گی۔۔۔ کھیت نہیں رہیں گے۔‘

خیال رہے کہ بی جے پی رہنما ساکشی مہاراج اپنا متنازع بیانات کی وجہ سے شہرت رکھتے ہیں۔

انڈیا میں لگ بھگ ساڑھے تین کروڑ سادھو ہیں۔ وہ مردوں کو دفنانے کی روایت پر عمل پیرا ہیں۔

ساکشی مہاراج کا کہنا تھا کہ ’میں وزیراعظم سے اپیل کرتا ہوں کہ صرف ایک شمشان گھاٹ ہونا چاہیے جو 'جنت' کی طرف کی جائے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption بی جے پی رہنما ساکشی مہاراج اپنا متنازع بیانات کی وجہ سے شہرت رکھتے ہیں

ساکشی مہاراج کا کہنا تھا کہ ایک نیا قانون بنانا چاہیے ’جس میں قبرستانوں کی کوئی جگہ نہ ہو۔ ایک مشترکہ شمشان گھاٹ ہونا چاہیے۔ اگر ایک ہی ہو گا تو اس کا مثبت نتیجہ سامنے آئے گا۔‘

تاہم انھوں نے اپنے بیان کی وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ ’ملک کی آبادی بڑھ رہی ہے اور زمین کی کمی ہے۔ لوگ کہاں رہیں گے اگر تمام زمین پر قبرستانوں کی تعمیر کے لیے استعمال کی جائے گی۔‘

خیال رہے کہ گذشتہ ماہ کے اواخر میں وزیراعظم نریندر مودی نے اتر پردیش کے شہر فتح پور میں ایک انتخابی ریلی سے خطاب کرتے ہوئے کہا تھا: 'رمضان میں بجلی آتی ہے تو دیوالی میں بھی آنی چاہیے۔ امتیازی سلوک نہیں ہونا چاہیے۔ اگر قبرستان ہے تو شمشان گھاٹ بھی ہونا چاہیے۔ عید اور ہولی دونوں کے موقع پر بجلی آنی چاہیے۔ کسی بھی صورت میں امتیازی سلوک نہیں ہونا چاہیے۔'

ساکشی مہاراج کا کہنا تھا کہ 'وزیراعظم نے جو کچھ کہا میں ان کے خلاف نہیں ہوں۔ میں نے کہا تھا کہ اس جگہ کا جو بھی نام ہے، اس کو مردوں کو نذرآتش کرنے کے مقصد کے استعمال ہونا چاہیے۔ کسی کو دفنانے کی ضرورت نہیں ہے۔'

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں