کلبھوشن کی سزا پر انڈین دھمکیاں

ٹویٹر
Image caption سبرامینین نے یہ ٹویٹ اپنے اکاونٹ سے کیا

بھارتیہ جنتا پارٹی کے ایک رکن سبرامینیم سوامی نے کہا ہے کہ اگر پاکستان نے کلبھوشن جادھو کو سزا موت دی تو بھارت کو بلوچستان کی علیحدگی کی حمایت شروع کر دینی چاہیے۔

ایک ٹوئٹ میں حزب اقتدار کے رہنما کا کہنا تھا کہ اگر پاکستان نے کلبھوشن کو تخت دار پر لٹکا دیا تو انڈیا کو بلوچستان کو ایک علیحدہ ملک کے طور پر تسلیم کر لینا چاہیے۔

کشمیریوں کا قتل عام منصوبہ بندی کے تحت ہو رہا ہے: خواجہ آصف

کلبھوشن سے پہلے کتنے جاسوس

کلبھوشن کو بچانے کے لیے انڈیا کسی بھی حد تک جائے گا: سشما سوراج

'انڈین جاسوس' کلبھوشن یادو کو سزائے موت دینے کا فیصلہ

پاکستان میں مبینہ بھارتی جاسوس کلبھوشن جادھو کو سزا موت سنائے جانے پر انڈیا میں شدید رد عمل سامنے آیا ہے اور حزب اقتدار بھارتیہ جنتا پارٹی کے ارکان نے دھمکی آمیز لہجہ اختیار کر لیا ہے۔

سوامی سبرامینیم کی ایک اور ٹویٹ میں مزید کہا گیا کہ اگر پاکستان نے اس کے بعد بھی کوئی ایسی حرکت کی تو سندھ پاکستان سے علیحدہ ہو جائے گا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

اس سے قبل انڈیا کی وزیر خارجہ سشما سوراج نے کلبھوشن کو ’انڈیا کا فرزند‘ قرار دیا اور پاکستان کی حکومت کو خبردار کیا کہ اگر کلبھوشن کی سزا پر عمل درآمد کیا گیا تو پاکستان کو باہمی تعلقات پر پڑنے والے اثرات کے بارے میں سوچ لینا چاہیے۔

انڈین پارلیمان میں وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے کہا کہ کلبھوشن کے پاس ویزا تھا اور انھیں جاسوس قرار نہیں دیا جا سکتا۔

کلبھوشن کے بارے میں انڈیا کا موقف یہ ہے کہ وہ ایک ریٹائرڈ نیوی افسر ہیں جو ایران میں اپنے کاروبار کے سلسلے میں موجود تھے جہاں سے انھیں اغوا کر کے پاکستان لایا گیا ہے۔

پاکستان میں کلبھوشن کی گرفتاری کے بعد ان کا ایک اعترافی بیان نشر کیا گیا تھا جس میں انھوں نے اپنے حاضر سروس نیوی افسر ہونے کا اعتراف کیا تھا۔ انھوں نے یہ بھی تسلیم کیا تھا کہ وہ بھارتی خفیہ ادارے کے لیے کام کر رہے تھے اور بلوچستان کے علاقہ رشاخیل میں قائم پذیر تھے۔ ان کے بیان میں یہ بھی کہا گیا کہ وہ بلوچستان کے علیحدگی پسندوں کو مدد فراہم کر رہے تھے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں