جمہوری بھارت کی تاریخ کا 'ٹرننگ پوائنٹ'

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter

تصور کریں کہ ٹی وی اینکر کسی فوجی افسر سے پوچھے کہ آپ کے علاقے میں سرحد پار سے دراندازی ہوئی تو آپ نے اسے روکا کیوں نہیں؟

اس کے بعد آٹھ کھڑکیوں میں بیٹھے طرح طرح کے لوگ ایک ساتھ چلانے لگیں۔ اگر آگے چل کر ایسا ہوا تو تعجب کی بات نہیں ہوگی۔

اس سمت میں بڑھنے کا آغاز 15 جنوری 2017 کو ملٹری ڈے کے موقع پر ہی ہو گیا تھا جب آرمی چیف جنرل بپن راوت نے دوردرشن اور ریڈیو سے ملک کے عوام کو براہ راست خطاب کیا تھا۔ اسے جمہوری بھارت کی تاریخ کا 'ٹرننگ پوائنٹ' کہا جانا چاہیے۔

’اب فوج آگئی ہے، سب ٹھیک ہو جائے گا‘

کشمیری نوجوان کو فوجی جیپ سے باندھنے کی مذمت

23 مئی 2017، آزاد انڈیا میں پہلی بار کسی میجر سطح کے افسر نے پریس کانفرنس کی۔ میجر گوگوئی نے بتایا کہ انھوں نے ایک کشمیری کو جیپ پر کیوں باندھا تھا۔ یہ پریس کانفرنس جمہوری حکومت کی رضامندی سے ہوئی۔

اس کے بعد جنرل راوت نے 28 مئی کو پریس ٹرسٹ آف انڈیا کو دیے گئے انٹرویو میں کہا کہ 'کشمیر میں لوگ پتھر پھینکنے کے بدلے گولیاں چلاتے تو ہمارے لیے اچھا رہتا، پھر ہم بھی وہ کر پاتے جو ہم کرنا چاہتے ہیں۔'

اس سے چند روز قبل ملک کے وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے کہا تھا کہ 'وہ مسئلہ کشمیر کا مستقل حل نکالیں گے'۔ کیا جس مستقل حل کی وہ بات کر رہے تھے وہ جنرل نکالیں گے یا حکومت نکالے گی؟

تصویر کے کاپی رائٹ indianarmy.nic.in

کشمیر جیسے سیاسی مسئلے پر کسی جنرل کے بولنے پر حکومت کو کافی غیر آرام دہ محسوس کرنا چاہیے تھا۔ انڈیا اور پاکستان کی فوج میں یہی فرق رہا تھا جو اب مٹتا دکھائی دے رہا ہے۔

ہندوستانی فوج سیاسی طور پر نیوٹرل آرمی رہی ہے۔ حکومت کے ساتھ اس کا ایسا تعلق پہلے کبھی نہیں دیکھا گیا۔ ایسا لگنے لگا ہے کہ مودی حکومت فوج کی طاقت اورحب الوطنی دونوں کو اپنی سیاسی طاقت بنانے میں مصروف ہے۔

کہانی کچھ اس طرح بنتی جا رہی ہے۔ مودی حکومت فوج کے ساتھ ہے اور فوج مودی حکومت کے ساتھ۔ پہلی بار حکومت فوج کے ساتھ ایک طرح کا اتحاد بنانے کی کوشش کرتی نظر آرہی ہے۔

انڈیا میں فوج وہ ادارہ ہے جس کی شبیہہ عوام کی نظروں میں بہت بہتر ہے اور شاید یہی وجہ ہے کہ حکومت دکھانا چاہتی ہے کہ اسے فوج کی حمایت حاصل ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ PTI

اگر قوم پرستی صرف سیاسی نہیں ہوتی تو ملک میں ایک فل ٹائم وزیر دفاع ہوتا۔ مارچ میں منوہر پاریکر کے گوا کا وزیر اعلیٰ بننے کے بعد سے ارون جیٹلی پارٹ ٹائم وزیر دفاع کی طرح کام کر رہے ہیں۔ پہلے ہی ان پر بھاری بھرکم وزارت خزانہ کی ذمہ داری ہے۔

جو کام اب تک ملک کا وزیر دفاع یا ترجمان کرتے رہے ہیں وہ اب فوج کے جنرل اور میجر کے حوالے کر دیا گیا ہے۔ کارگل کی لڑائی کے وقت کے آرمی چیف جنرل وی پی ملک نے بی بی سی سے بات چیت میں میجر گوگوئی کی پریس کانفرنس کو غلط قرار دیا۔

انھوں نے کہا 'کشمیر جیسے سیاسی اور پیچیدہ مسئلے پر بولنا جنرل کا ذاتی فیصلہ نہیں ہو سکتا، اس کے پیچھے ایک سوچی سمجھی پالیسی کام کر رہی ہے۔ اس سے پہلے جنرل تو کیا، دونوں شعبوں کے مارشل - كريپپا اور مانیك شا نے بھی کبھی سیاسی امور پر منہ نہیں کھولا۔'

جنرل جگجیت سنگھ اروڑہ نے 1971 کی جنگ جیتنے کے بعد، جنرل سندرجی نے آپریشن بلیو سٹار کے بعد یا جنرل ملک نے کارگل کی جنگ کے بعد بھی پریس کانفرنس کرنے کی ضرورت نہیں سمجھی۔

اب تک کے انٹرویوز اور پریس کانفرنس 'نوٹلی مینیجڈ' یعنی مکمل طور پر کنٹرولڈ تھے۔ اس کی عادت اور ٹریننگ نہ ہونے کے باوجود فوجی افسر اپنی بات کہہ کر نکل تو گئے لیکن اس نے فوج کو نیچے اتار کر عوام کے درمیان لا کھڑا کیا ہے۔

تمام حکومتیں میڈیا میں شبیہہ کی لڑائياں لڑتی رہی ہیں لیکن اس حکومت نے جنگ میں فوج کو اتارنے کا فیصلہ کیا ہے۔

ان دنوں تعلیم، ثقافت سے لے کر فوج تک، ہر جگہ 'نئے تجربے' کیے جا رہے ہیں۔ پوچھنے والے معصومیت سے پوچھتے ہیں کہ 'اس میں کیا غلط ہے؟'

جمہوری طریقے سے ملک چلانے کے کچھ اصول ہیں۔ ان میں سے ایک یہ بھی ہے کہ فوج کو سیاسی سرگرمیوں سے دور رکھا جائے لیکن قوم پرستی کو سیاسی مسئلہ بنانے والی حکومت کو اس سے پرہیز نہیں ہے۔

جو فوج بحث مباحثے کا موضوع نہ ہوکر، احترام کی مستحق تھی وہ 'میرا ملک بدل رہا ہے' کی منصوبہ بندی کے تحت ٹی وی چینلز پر جنگ لڑنے کے لیے اتاری جا رہی ہے۔

کسی بھی جمہوریت میں ہر سرگرمی بنیادی طور سیاسی ہوتی ہے۔ یہی وجہ ہے کہ 'شہری' اور 'سروس مین' کا فرق بالکل صاف رہا ہے۔

بھارت میں یہ بات واضح رہی ہے کہ تینوں افواج کا کمانڈر ان چیف صدر ہے، وزیر دفاع فوج کی سرگرمیوں کے لیے جوابدہ ہے اور فوج جمہوری طور پر منتخب حکومت کے تابع کام کرتی ہے۔

سنجیدہ وجوہات کے سبب یہ ایک ایسا رسمی نظام ہے پر جس پر اس حکومت سے پہلے تک عمل ہوتا رہا ہے۔ حکومت کا وزیر دفاع یا ان کا ترجمان عوام سے فوج کے بارے میں بات کرتا ہے، اور فوج صرف غیر ملکی دشمنوں سے ملک کی حفاظت کی ذمہ داری اٹھاتی ہے۔

لوگوں کی رائے بنانے اور اسے بگاڑنے میں ٹی وی چینلز کے کردار اور ملک کے شہریوں سے لڑنے کے لیے فوج کا اتارا جانا، یہ دو ایسی چیزیں ہیں جنھوں نے حالات کو اور دلچسپ بنا دیا ہے۔ ایسے میں حکومت پر جس ذمہ داری کی توقع کی جاتی ہے وہ نظر نہیں آرہی ہے۔

پاکستان، مصر، برما، تھائی لینڈ، مشرق وسطی اور لاطینی امریکی ملک، جہاں کہیں فوج سیاست میں شریک ہے، وہاں جمہوریت کی حالت کو جاننے کے لیے گوگل کی مدد لیں۔

فوج کو سیاست کے میدان میں لانا اگرچہ حکومت کو آج صحیح لگ رہا ہو، لیکن ملک کی حفاظت کرنے سے آگے بڑھ کر، ملک کو چلانے کا جذبہ افواج میں رہ رہ کر جاگتا رہا ہے، بھارت اس سے مبرا رہے گا یہ سوچنا بہت بڑا خطرہ اٹھانے کے مترادف ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں