کشمیر: ’فوجی آپریشن میں لوگ حائل‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption خفیہ نیٹ ورک مضبوط ہے، ہمیں پتہ بھی چلتا ہے کہ انتھاپسند کہاں پر ہیں، لیکن جونہی محاصرہ کیا جاتا ہے، مقامی لوگ انتھاپسندوں کو بچانے کے لئے مظاہرہ کرتے ہیں: فوج

بھارت کے زیرانتظام کشمیرمیں فوجی حکام کا کہنا ہے کہ جنگلوں میں چھپے مسلح شدت پسندوں کے خلاف جو وسیع آپریشن شروع کیا گیا ہے، اس میں عام لوگ سب سے بڑی رکاوٹ ہیں۔

کشمیر میں فوجی قافلے پر مسلح حملہ

’کشمیر میں جو ہو رہا ہے وہ غلط ہے ‘

سرینگر میں تعینات فوج کی پندرہویں کور کے ایک اعلی افسر نے بتایا: ’خفیہ نیٹ ورک مضبوط ہے، ہمیں پتہ بھی چلتا ہے کہ انتہاپسند کہاں پر ہیں، لیکن جونہی محاصرہ کیا جاتا ہے، مقامی لوگ انتہاپسندوں کو بچانے کے لیے مظاہرہ کرتے ہیں۔‘

ایسا ہی ایک واقعہ چھ جون کو شوپیان میں ہوا جب فوج، پولیس اور دیگر فورسز نے ایک گاؤں کا محاصرہ کیا۔

محصور شدت پسندوں کے حق میں لوگوں کی بڑی تعداد جس میں خواتین بھی تھیں، نے محاصرہ کرنے والی فورسز پر پتھراؤ کیا۔ اس دوران فورسز نے مظاہرین پر فائرنگ کی جس میں عادل فاروق نامی نوجوان ہلاک ہوگیا۔ اس کے فوراً بعد کئی علاقوں میں مظاہرے ہوئے۔ حکام نے متعدد حساس علاقوں کی ناکہ بندی کی اور انٹرنیٹ سروس کو معطل کردیا۔

عادل فاروق کی ہلاکت کے خلاف جمعے کے روز وادی میں ہڑتال کی گئی۔ حکومت نے سرینگر کے بیشر علاقوں میں سیکورٹی پابندیاں نافذ کردی ہیں، جبکہ شوپیان کی طرف عوامی مارچ کو ناکام بنانے کے لئے جنوبی کشمیر میں بھاری تعداد میں فورسز اہلکاروں کو تعینات کیا گیا ہے۔ اس سلسلے میں اندرونی ریل سروس کو بھی معطل کیا گیا، جبکہ نویں، دسویں، گیارہوں اور بارہویں جماعتوں کے لیے سبھی تعلیمی اداروں میں چار روز سے تعلیمی سرگرمیوں کو بھی معطل کیا گیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption عادل فاروق کی ہلاکت کے خلاف جمعے کے روز وادی میں ہڑتال کے دوران خواتین کا احتجاج

گذشتہ کئی برسوں سے شدت پسندوں کے خلاف فوجی آپریشنوں کے وقت لوگ باہر نکل کر مظاہرہ کرتے ہیں اور تصادم کےد وران بھی جائے واردات پر جمع ہوکر شدت پسندوں کو بچانے کی کوشش کرتے ہیں۔ ایسے واقعات میں اب تک درجنوں افراد مارے گئے۔ پولیس نے لوگوں سے بارہا اپیل کی کہ وہ تصادم کی جگہوں کے قریب نہ جائیں کیونکہ ’گولی کسی کا لحاظ نہیں کرتی‘ ، تاہم اس رجحان میں روز بروز تیزی آرہی ہے۔

یکم جون کو سرینگر میں تعینات فوج کی پندرہویں کور کے ہیڈکوارٹر پر بھارت کی برّی، بحری اور فضائی افواج کے تینوں سربراہوں اور ملک کے سات کور کمانڈروں کے علاوہ خفیہ ایجنسیوں کے سربراہوں کا اہم اجلاس منعقد ہوا۔

اجلاس میں جون کے آخر میں شروع ہونے ہوالی ہندوؤں کی سالانہ امرناتھ یاترا سے قبل جنگلوں میں چھپے شدت پسندوں کے خلاف آپریشن کو پایہ تکمیل تک پہنچانے کا عزم کیا گیا۔ اس حوالے سے ذاکر موسی، ریاض کاوسہ، زینت الاسلام اور ابو دجانہ سمیت بارہ عساکر کی فہرست بھی جاری کردی گئی اور فورسز کو ہدایت دی گئی کہ ہر قیمیت پر انھیں غیرمسلح یا ہلاک کیا جائے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں