انڈیا میں ہر 15 منٹ میں ایک بچہ جنسی زیادتی کا شکار ہوتا ہے: رپورٹ

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

انڈیا کی حکومت کی جانب سے جاری کردہ تازہ اعداد و شمار کے مطابق ملک میں ہر 15 منٹ میں ایک بچہ جنسی زیادتی کا شکار ہوتا ہے۔

یہ اعداد و شمار انڈیا کے نیشنل کرائم ریکارڈز بیورو نے جاری کیے ہیں۔ اس ڈیٹا کے مطابق بچوں کے خلاف جرائم کی تعداد مسلسل بڑھ رہی ہے۔

چند ماہ قبل 10 سالہ بچی جس کو ریپ کیا گیا تھا اس کو بچہ گرانے نہیں دیا گیا تھا۔ اس واقعے کے اخباروں کی سرخیاں میں آنے کے بعد سے بچوں کے ساتھ جنسی زیادتی کے مسئلہ پر بحث چھڑی ہوئی ہے۔

مزید پڑھیے

ریپ کیس: نومولود کا باپ ’دوسرا چچا تھا‘

انڈیا: دس سالہ بچی کا ریپ، بچی کے ماموں مجرم قرار

والدین نے ’بیٹی کا ریپ کرنے والے ملزمان کو پکڑ لیا‘

آپ ریپ ہوتے ہوئے دیکھیں تو کیا کریں گے؟

تصویر کے کاپی رائٹ Not Specified

اس بچی کے دو رشتہ داروں کو ریپ کے جرم میں عمر قید کی سزا سنائی گئی تھی۔

انڈیا کے وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے سال سنہ 2016 میں جرائم کے اعداد و شمار کی رپورٹ پیش کی۔ اس رپورٹ کے مطابق بچوں کے خلاف جرائم کے تقریباً ایک لاکھ سات ہزار واقعات پیش آئے۔

ان واقعات میں 36 ہزار واقعات بچوں کے ساتھ جنسی جرائم سے متعلق ہیں۔

بی بی سی کی گیتا پانڈے نے بتایا کہ دنیا بھر میں بچوں کے خلاف جنسی زیادتی سمیت سب سے زیادہ جرائم انڈیا میں ہوتے ہیں۔

انڈیا کی وزارت برائے خواتین اور بچوں کی فلاح و بہبود کی 2007 کی رپورٹ کے مطابق سروے میں حصہ لینے والے 53 فیصد بچوں کا کہنا ہے کہ ان کے ساتھ جنسی زیادتی ہوئی ہے۔

اسی بارے میں