انڈیا: سپریم کورٹ ہم جنس پرستی سے متعلق فیصلے پر نظر ثانی کرے گی

ہم جنس پرستی تصویر کے کاپی رائٹ AFP/GETTY IMAGES

انڈیا کی سپریم کورٹ نے کہا ہے کہ وہ اپنے اس فیصلے پر نظر ثانی کرے گی جس کے تحت اس نے ہم جنس پرستی کو جرم کے زمرے میں شامل کرنے والے قانون کو آئین کی روشنی میں درست قرار دیا تھا۔

انڈیا میں تعزیرات ہند کی دفعہ 377 کے تحت ہم جنس پرستی کو جرم قرار دیا گیا ہے لیکن انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والوں کا دیرینہ الزام ہے کہ پولیس یہ شق ہم جنس پرستوں کو پریشان کرنے کے لیے استعمال کرتی ہے۔

عدالت نے نظرثانی کا فیصلہ پانچ ہم جنس پرستوں کی درخواست پر کیا ہے جن کا کہنا تھا کہ وہ خوف کے سائے میں زندگی گزار رہے ہیں۔

یہ بھی پڑھیے

'مولوی، پنڈت، راہب، پادری سب ایک سر'

کرن کی خود نوشت: ہم جنس پرستی پر بحث تیز

سنہ 2009 میں دلی ہائی کورٹ نے ایک تاریخی فیصلے میں کہا تھا کہ دو بالغ اگر اپنی مرضی سے کوئی رشتہ قائم کرتے ہیں تو اسے جرم نہیں کہا جاسکتا لیکن چار سال بعد سنہ 2013 میں سپریم کورٹ نے اس فیصلے کو کالعدم قرار دے دیا تھا۔

اس فیصلے پر نظرثانی کی ایک پٹیشن بھی عدالت میں زیر التوا ہے۔

درخواست گزار کے وکیل آنند گروور کے مطابق ایک وسیع تر بینچ تمام درخواستوں کو یکجا کرکے ان کی سماعت کرے گا اور دفعہ 377 کو آئین کی کسوٹی پر پرکھا جائے گا۔ اس معاملے میں کوئی حتمی فیصلہ اکتوبر تک آنے کی امید ہے کیونکہ موجودہ چیف جسٹس اکتوبر میں ریٹائر ہو جائیں گے۔

عدالت نے کہا کہ عوام کا کوئی حلقہ یا کچھ لوگ صرف اس وجہ سے خوف میں زندگی نہیں گزار سکتے کہ وہ اپنی پسند کے مطابق رہنا چاہتے ہیں۔ نہ ان کی پسند قانون کی حدود کو پار سکتی ہے اور نہ قانون، آئین کی دفعہ 21 کےتحت انھیں حاصل اختیارات کو صلب کرسکتا ہے۔

اس سے پہلے گذشتہ برس اگست میں بھی سپریم کورٹ نے 'پرائیویسی' کے سوال پر ایک انتہائی اہم فیصلے میں کہا تھا کہ 'سیکس کے معاملے میں پسند ناپسند لوگوں کا نجی معاملہ ہے۔۔۔'

عدالت کے اس فیصلے کے بعد یہ امید دوبارہ جاگی تھی کہ ہم جنس پرستی کو جرم کے زمرے سے نکالنے کی راہ ہموار ہو سکتی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption ملک میں بی جے پی کی حکومت ہے جس کے بہت سے سینیئر رہنما ہم جنس پرستی کو غیر فطری عمل مانتے ہیں

ہائی کورٹ کے فیصلے کے خلاف اپیل پر سپریم کورٹ کی دو رکنی بنچ نے کہا تھا کہ دہلی ہائی کورٹ نے ہم جنس پرستی کو جرم کے زمرے سے نکال کر غلطی کی تھی۔

ہائی کورٹ کے فیصلے کو ہندو، عیسائی اور مسلم مذہبی تنظیموں نے چیلنج کیا تھا۔ ان کا موقف تھا کہ ہم جنس پرستی غیر فطری عمل ہے اور اسے جرم کے زمرے میں ہی شامل رہنا چاہیے۔

سپریم کورٹ کے سنہ 2013 کے فیصلے کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا گیا تھا اور غیر معمولی طور پر کانگریس کی اعلی ترین قیادت، اخبارات اور ٹی وی چینلوں نے بھی کھل کر اس فیصلے پر تنقید کی تھی۔

اس وقت کے وزیر قانون کپل سبل نے کہا تھا کہ اکیسویں صدی میں اس قانون کے لیے کوئی جگہ نہیں ہے۔

لیکن اب ملک میں بی جے پی کی حکومت ہے جس کے بہت سے سینیئر رہنما ہم جنس پرستی کو غیر فطری عمل مانتے ہیں۔ سپریم کورٹ نے وفاقی حکومت سے بھی اس کا موقف معلوم کیا ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں