تیج پال سے تفتیش کے لیے گوا پولیس دہلی میں

Image caption یہ واقعہ سامنے آنے کے بعد ترون تیج پال کے خلاف مظاہرے بھی ہوئے ہیں

بھارتی جریدے ’تہلکہ‘ کے بانی مدیر ترون تیج پال سے جنسی زیادتی کے معاملے میں تفتیش کے لیےگوا پولیس کی ایک خصوصی ٹیم سنیچر کو دہلی پہنچ گئی ہے۔

تیج پال پر اپنے ہی ادارے کی ایک خاتون ساتھی سے جنسی بدسلوکی کا الزام ہے۔

مبینہ طور پر یہ واقعہ تقریباً ایک ہفتہ پہلے گوا میں ایک پروگرام کے دوران پیش آیا تھا اور ترون تیج پال نے مبینہ جنسی زیادتی کا معاملہ سامنے آنے کے بعد اپنے عہدے سے چھ ماہ کے لیے علیحدہ ہونے کا فیصلہ کیا تھا۔

گوا پولیس نے اس معاملے میں ترون تیج پال کے خلاف جمعہ کو جنسی زیادتی کے لیے تعزیراتِ ہند کی دفعات 376 اور 376 (2) کے تحت ایف آئی آر درج کی تھی جس کے بعد اب تحقیقاتی ٹیم دہلی بھیجی گئی ہے۔

گوا پولیس کے ڈپٹی انسپکٹر جنرل او پی مشرا کا کہنا ہے کہ ہوٹل سے ملنے والی سی سی ٹی وی فوٹیج سے پتہ چلا ہے کہ جس لفٹ کے اندر بدسلوکی کا یہ مبینہ واقعہ پیش آیا وہاں سی سی ٹی وی کیمرہ نصب نہیں تھا۔

انہوں نے بتایا کہ ’گیسٹ ہاؤس کے اردگرد تو سی سی ٹی وی کیمرے لگائے گئے تھے، لیکن لفٹ کے اندر کوئی کیمرہ نہیں تھا۔‘ انہوں نے کہا کہ پولیس کو جو بھی فوٹیج ملی ہے اس کا معائنہ کیا جا رہا ہے۔‘

او پی مشرا نے یہ بھی بتایا کہ گوا پولیس کی ایک خصوصی ٹیم دہلی پہنچ چکی ہے اور وہ تیج پال سے پوچھ گچھ کر سکتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ تمام فریقین کو تحقیقات میں تعاون کرنا چاہیے۔

خبر رساں ایجنسی پی ٹی آئی کے مطابق گوا پولیس کی کرائم برانچ کی چار رکنی ٹیم سنیچر کی دوپہر دہلی پہنچی اور وہ مزید کارروائی سے پہلے ’تہلکہ‘ کی منیجنگ ڈائریکٹر شوما چودھری کا بیان لے سکتی ہے۔

’تہلکہ‘ کی منیجنگ ڈائریکٹر شوما چودھری نے کہا ہے کہ وہ گوا پولیس سے تحقیقات میں مکمل تعاون کریں گی۔

خیال رہے کہ میگزین نے بھی خاتون صحافی کے ساتھ ویب سائٹ کے بانی ایڈیٹر ترون تیج پال کی مبینہ جنسی زیادتی کے معاملے کی تفتیش کے لیے ایک کمیٹی قائم کی ہے۔

اسی بارے میں