افغان لویا جرگے نے امریکہ سے سکیورٹی معاہدے کی منظوری دے دی

Image caption لویا جرگے میں 2000 سے زیادہ عمائدین شریک تھے

افغانستان کے دارالحکومت کابل میں منعقدہ لویا جرگے میں شامل افغان عمائدین نے امریکہ سے سکیورٹی کے معاہدے کی منظوری دے دی ہے۔

اس معاہدے کے تحت امریکہ کے ہزاروں فوجیوں کو سنہ 2014 کے بعد بھی ملک میں قیام کی اجازت ہوگی۔

جرگے میں شامل دو ہزار سے زیادہ عمائدین نے افغان صدر حامد کرزئی سے کہا ہے کہ وہ رواں برس کے اختتام سے قبل اس معاہدے پر دستخط کر دیں۔

جرگے کا یہ مطالبہ صدر کرزئی کے اس بیان سے مطابقت نہیں رکھتا جو انہوں نے جرگے سے اپنے خطاب میں دیا تھا اور جس میں کہا گیا تھا کہ معاہدے پر اپریل سنہ 2014 میں ہونے والے افغان صدارتی انتخابات سے پہلے دستخط نہیں ہوں گے۔

خیال رہے کہ امریکہ بھی یہی چاہتا ہے کہ معاہدہ 2013 کے اختتام سے قبل طے پا جائے اور اس کا کہنا ہے کہ اس سلسلے میں ’تاخیر نہ تو عملی اور نہ ہی ممکن ہے۔‘

Image caption حامد کرزئی صدارتی انتخاب سے قبل معاہدے پر دستخط کرنے سے گریزاں ہیں

افغان حکومت اور امریکہ کے مابین معاہدے کے مسودے میں جو معاملات سب سے زیادہ بحث کا موضوع بنے تھے وہ امریکی فوجیوں کو افغان عدالتی عمل سے استثنیْ اور انہیں کارروائی کے لیے افغانیوں کی رہائش گاہوں میں داخلے کی اجازت سے متعلق تھے۔

تاہم افغان وزارتِ خارجہ نےگزشتہ بدھ کو باہمی سکیورٹی کے معاہدے کا وہ متن شائع کیا تھا جس پر امریکہ اور افغانستان نے اتفاق کیا ہے اور اس کے مطابق امریکی افواج کو سنہ 2014 کے بعد افغان عدالتوں سے استثنیٰ حاصل ہو گا۔

دوسرے معاملے پر امریکی صدر براک اوباما نے لویا جرگے کے نام ایک خط میں افغان قوم کو یقین دلایا کہ امریکی افواج افغانستان کی خود مختاری کا احترام کریں گی۔

انہوں نے کہا کہ ’غیر معمولی حالات‘ کے علاوہ امریکی فوجی کسی افغان گھر میں داخل نہیں ہوں گے۔

اسی بارے میں