جسٹس گنگولی کمیشن کی صدارت سے مستعفی

Image caption جسٹس گنگولی خود پر عائد الزامات سے انکار کرتے رہے ہیں

جنسی استحصال کے الزامات کا سامنا کرنے والے سپریم کورٹ کے سابق جج جسٹس اشوک کمار گنگولی نے مغربی بنگال کے حقوقِ انسانی کمیشن کے صدر کے عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے۔

خبر رساں ایجنسی پی ٹی آئی نے ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ جسٹس گنگولی پیر کی شام کولکتہ میں راج بھون پہنچے اور انہوں نے مغربی بنگال کے گورنر ایم کے نارائنن کو اپنا استعفی سونپ دیا۔

گورنر سے ملاقات کے بعد انھوں نے خود تو استعفے کی خبر پر تبصرہ کرنے سے انکار کیا تاہم سابق اٹارنی جنرل سولي سوراب جي نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے اس کی تصدیق کی ہے اور اسے ’درست فیصلہ‘ قرار دیا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ’یہ اچھی بات ہے کہ انہوں نے مجھ سے بات کرنے کے ایک دن بعد استعفیٰ دے دیا‘۔ انہوں نے بتایا کہ جسٹس گنگولی نے ایک دن پہلے انہیں فون کر کے کہا تھا کہ وہ مستعفی ہونے پر غور کر رہے ہیں۔

جسٹس گنگولی کے استعفے کا مطالبہ کرنے والی ایڈیشنل سالیسٹر جنرل اندرا جيسہ نے کہا کہ انہیں کافی پہلے ہی استعفی دے دینا چاہیے تھا۔

Image caption جسٹس گنگولی کا معاملہ سپریم کورٹ کے لیے بھی ایک ٹیسٹ کیس سمجھا جا رہا تھا

جسٹس گنگولی کی جانب سے مستعفی ہونے کا فیصلہ مرکزی کابینہ کے اس فیصلے کے بعد آیا ہے جس میں اس معاملے پر سپریم کورٹ کو صدر کی رائے بھیجے جانے کی تجویز کی منظوری دی گئی تھی۔

کابینہ کے اس اقدام کو جسٹس گنگولی کو مغربی بنگال انسانی حقوق کمیشن کی صدارت سے ہٹائے جانے کی سمت میں ایک اہم قدم قرار دیا جا رہا تھا۔

اس معاملے میں سپریم کورٹ کی طرف سے قائم تین ججوں کی ایک کمیٹی نے جسٹس گنگولی پر لگے الزامات کی تصدیق کی تھی.

کمیٹی نے کہا تھا کہ تحریری اور زبانی بیان سے لگتا ہے کہ جسٹس گنگولی نے متاثرہ خاتون کے ساتھ 24 دسمبر 2012 کو دہلی کے لی میریڈين ہوٹل میں غلط طرز عمل اختیار کیا تھا۔

جسٹس گنگولی نے ان الزامات کو مسترد کرتے ہوئے کہا تھا کہ کچھ طاقتور لوگ ان کی ساکھ بگاڑنے کی کوشش کر رہے ہیں کیونکہ انہوں نے ان کے خلاف چند فیصلے دیے تھے۔

اسی بارے میں