بھارتی بحریہ کے کمانڈر کی ہلاکت کی تحقیقات کا حکم

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption فروری میں ممبئی بندرگاہ کے نزدیک بھارتی بحریہ کی آبدوز آئی این ایس سندھرتن حادثے کا شکار ہو گئی تھی جس میں دو اہلکار ہلاک ہوئے تھے

بھارت کی وزارتِ دفاع نے ساحلی شہر ممبئی کی بندرگاہ پر ہونے والے حادثے میں بھارتی بحریہ کے افسر کی ہلاکت کی تحقیقات کا حکم دیا ہے۔

وزارت دفاع کی جانب سے جمعے کو جاری ہونے والی پریس ریلیز میں کہا گیا ہے کہ بھارتی بحریہ نے حادثے میں تحقیقات کے لیے ایک کمیٹی تشکیل دی ہے۔

پریس ریلیز کے مطابق وزارت نے حادثے کے بارے میں تفصیلی رپورٹ بھی طلب کی ہے۔

جمعے کو ممبئی میں ہونے والے حادثے کے بعد بحریہ کے ایک افسر کمانڈر کتل وادھوا اور دیگر دو ملازمین کو ہسپتال لے جایا گیا تھا۔

بھارتی بحریہ کے کی طرف سے جاری کیے گئے بیان کے مطابق: ’زیرِ تعمیر یارڈ 701 میں کام کے دوران کاربن ڈائی آکسائڈ گیس یونٹ میں خرابی کے سبب زہریلی گیس کا اخراج ہوا۔‘

بحریہ کے ترجمان کے مطابق ’تین لوگ گیس کے رساؤ سے متاثر ہوئے جن میں سے بدقسمتی سے ایک چل بسا اور دو کو ہسپتال میں داخل کیا گیا ہے۔‘

يارڈ 701 نامی جہاز بھارتی بحریہ میں شامل ہونے کے بعد آئی این ایس کولکتہ کے نام سے پہچانا جائے گا۔

خیال رہے کہ بھارتی بحریہ کو ماضی قریب میں کئی حادثات کا سامنا کرنا پڑا ہے جن میں متعدد اہلکار مارے گئے ہیں۔

رواں برس فروری میں ممبئی کی بندرگاہ کے نزدیک ہی بھارتی بحریہ کی آبدوز آئی این ایس سندھرتن حادثے کا شکار ہو گئی تھی جس میں دو اہلکار ہلاک ہو گئے تھے۔

بھارتی بحریہ کے سربراہ ایڈمرل ڈی کے جوشی نے سدھرتن حادثے کے بعد استعفیٰ بھی دے دیا تھا۔

اس سے قبل گذشتہ سال اگست میں بھارتی بحریہ کی آبدوز سندركھشك بھی ممبئی کے ساحل کے نزدیک حادثے کا شکار ہو گئی تھی جس میں 18 فوجی ہلاک ہو گئے تھے۔

اسی بارے میں