سیکولر فورسز مودی کے خلاف متحد ہوں: لالو پرساد

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption لالو پرساد یادو کی جماعت بہار میں 40 نشستوں میں سے 27 سیٹوں پر انتخابات لڑ رہی ہے

بھارت میں راشٹریہ جنتادل کے سربراہ لالو پرساد یادو نے تمام سیکولر قوتوں سے کہا ہے کہ وہ بی جے پی رہنما اور گجرات کے وزیر اعلیٰ نریندر مودی کے خلاف صف آرا ہو جائیں تاکہ وہ اقتدار حاصل نہ کر سکیں۔

انھوں نے کہا کہ بی جے پی کے وزیرِ اعظم کے امیدوار نریندر ’مودی ملکی اتحاد اور سالمیت کو خطرے میں ڈال دیں گے۔‘

بھارتی خبر رساں ادارے پی ٹی آئی کے مطابق انھوں نے نریندر مودی کو بہار کے پورنیہ ضلعے میں اشتعال انگیز تقریر کے لیے تنقید کا نشانہ بنایا۔

لالو پرساد نے نامہ نگاروں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ’مودی نے جس طرح اپنے سیاسی حریفوں کو تنقید کا نشانہ بنایا ہے اس سے یہ بات سامنے آتی ہے کہ انھوں نے حقیقی طور پر سیکولر قوتوں کو چیلنج کیا ہے کہ وہ انھیں اقتدار میں آنے سے روک سکتے ہیں تو روک لیں۔‘

انھوں نے اقلیتوں کے خلاف مودی کے طرز اور لہجے کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ ’یہی وہ طرز خیال ہے جس نے انھیں سنہ 2002 کے گجرات فسادات کو روکنے سے باز رکھا۔‘

انھوں نے کہا کہ اس وقت بھارت کے وزیرِ اعظم اٹل بہاری واجپئی مودی کو برخاست کرنا چاہتے تھے لیکن نائب وزیرِ اعظم ایل کے اڈوانی ان کے اس فیصلے میں حائل ہو گئے۔

بہر حال انھوں نے کہا: ’واجپئی جو نہ کر سکے وہ ہم لوگ کریں گے اور انھیں (مودی) مرکز میں اقتدار میں آنے سے باز رکھیں گے۔‘

واضح رہے کہ جب سے بھارت میں پارلیمانی انتخابات کی تاریخوں کا اعلان ہوا ہے سیاسی سرگرمیاں تیز ہو چکی ہے اور تمام سیاسی پارٹیاں ایک دوسرے کے خلاف محاذ آرا ہیں۔

بہار میں راشٹریہ جنتا دل برسر اقتدرا جماعت کانگریس کی بڑی حلیف جماعت ہے اور وہاں سہ رخی مقابلہ ہے۔ ایک جانب بی جے پی ہے تو دوسری جانب ریاست میں نیتیش کمار کی قیادت میں حکمراں جماعت جنتا دل یونائٹیڈ ہے۔

لالو پرساد یادو کی جماعت بہار میں 40 نشستوں میں سے 27 سیٹوں پر انتخابات لڑ رہی ہے۔

دریں اثنا اطلاعات کے مطابق راشٹریہ جنتا دل کے اہم رہنما رام کرپال یادو اور ایم ایل سی غلام غوث نے پارٹی سے علیحدگی اختیار کر لی ہے جبکہ سابق ایم پی راجیش رنجن عرف پپّو یادو نے پھر سے پارٹی میں شمولیت اختیار کی ہے۔

اسی بارے میں