بھارت کی راجدھانی ایکسپریس کے حادثے میں 4 افراد ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ Indian Rail
Image caption بھارتی ریلویز دنیا کے سب سے بڑے ریل نیٹ ورکوں میں سے ایک ہے

بھارت کی شمال مشرقی ریاست بہار میں چھپرا ضلع کے نزدیک ملک کی اہم ترین ٹرین راجدھانی ایکسپریس پٹری سے اتر گئی ہے۔

اس حادثے میں حکام کے مطابق چار افراد ہلاک جبکہ 10 سے زیادہ مسافر زخمی ہوگئے ہیں۔

یہ ٹرین دارالحکومت دہلی سے شمال مشرقی ریاست آسام کے ڈبروگڑھ جا رہی تھی۔ راجدھانی ریل ایکسپریس ملک کی اکثر ریاستوں کو دارالحکومت دہلی سے جوڑنے کے لیے تیز ترین ریل نٹ ورک ہے۔

حادثے کے بارے میں معلومات دیتے ہوئے چھپرا ضلعے کے پولیس سپرنٹنڈینٹ سجيت کمار سنگھ نے بی بی سی کو بتایا کہ ’چار میں سے ایک مسافر کی لاش ٹرین کی بی - ٹو بوگی اور پٹریوں کے درمیان پھنسی ہوئی ہے۔‘

امدادی ٹیم جائے حادثہ پر پہنچ چکی ہے اور امدادی کام جاری ہے، زخمیوں کو ضلعے کے صدر ہسپتال پہنچا دیا گیا ہے جہاں ان کا علاج کیا جا رہا ہے۔

زخمیوں میں سے کسی کی حالت تشویشناک نہیں بتائی جا رہی ہے۔

ریلوے بورڈ کے صدر ارونیندر کمار نے خبر رساں ایجنسی اے این این کو بتایا کہ مرنے والوں کو دو لاکھ کا معاوضہ دیا جائے گا۔

ریلویز کے مرکزی وزیر سدانند گوڑا نے واقعے پر گہرے افسوس کا اظہاہر کیا ہے۔

مقامی صحافی منیش شانڈليہ کے مطابق حادثہ بہار میں گولڈن گنج سٹیشن کے پاس ہوا۔

پولیس نے اس حادثے میں کسی قسم کی سازش یا ریاست میں متحرک ماؤنوازو باغیوں کی کارروائی سے انکار کیا ہے۔ پولیس اہلکار نے بتایا: ’جائے حادثہ پر ایسا کوئی سراغ نہیں ملا ہے، جس سے یہ شک کیا جائے کہ اس حادثے میں نکسلیوں کا ہاتھ ہے۔‘

انھوں نے مزید کہا: ’جائے حادثہ پر نہ تو بارود کی بو ملی ہے، نہ ہی دھماکہ خیز مادے یا کسی طرح کی توڑ پھوڑ کے ہی نشان نظر آئے ہیں۔‘

تاہم انھوں نے یہ بھی کہا کہ حادثے کی اصل وجہ تفتیش کے بعد ہی سامنے آ سکے گی۔

واضح رہے کے ماؤ نواز باغیوں نے بدھ کو اس پورے علاقے میں ہڑتال کا اعلان کر رکھا ہے۔

بھارت میں ہر سال کوئی نہ کوئی ریل حادثہ ہو جاتا ہے اور ان حادثات میں بڑی تعداد میں لوگوں کی موت ہو جاتی ہے۔

سنہ 2012 میں جاری کی جانے والی ایک سرکاری رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ بھارت میں ہر سال تقریباً 15 ہزار افراد حادثات میں ہلاک ہو جاتے ہیں۔

رپورٹ میں خراب حفاظتی معیار کی وجہ سے ہونے والی اموات کو ایک طرح کا قتل عام قرار دیا گیا تھا۔

یاد رہے کہ گذشتہ سال اگست میں بہار کے کھگڑیا ضلع میں راج رانی ایکسپریس ٹرین کی زد میں آ کر 28 افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

اسی بارے میں