’مسئلہ کشمیر پر اقوام متحدہ کو ملوث نہ کریں‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption راج ناتھ سنگھ

بھارت نے کہا ہے کہ پاکستان مسئلہ کشمیر میں اقوام متحدہ کو شامل کرنے کی کوشش نہ کرے اور اگر کوئی تنازع ہے تو اسے باہمی مذاکرات کے ذریعہ حل کیا جانا چاہیے۔

وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے انڈو تبتن بارڈر پولیس کی ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان لائن آن کنٹرول پر جنگ بندی کی خلاف ورزیاں بھی بند کرے اور یہ کہ ’انھوں معلوم ہے کہ بھارت کی فوج میں (ان کارروائیوں کا) منہ توڑ جواب دینے کی صلاحیت ہے۔‘

جب سے لائن آف کنٹرول پرگولہ باری کا سلسلہ شروع ہوا ہے، بھارتیہ جنتا پارٹی کی حکومت نے انتہائی سخت موقف اختیار کیا ہے۔ اسی ہفتے وزیر دفاع ارون جیٹلی نے کہا تھا کہ اگر ایل او سی پر جنگ بندی کے معاہدے کی خلاف ورزیاں جاری رہیں تو یہ پاکستان کے لیے مزید تکلیف دہ ثابت ہوگا۔

راج ناتھ سنگھ نے کہا کہ پاکستان کشمیر کےمسئلے پر کسی تیسرے فریق کی ثالثی کی کوششیں بھی ترک کردے۔

’پاکستان کی قومی اسمبلی نے ایک قرارداد منظور کرکے یو این کی مداخلت کی بات کہی ہے۔۔۔لیکن اگر کوئی تنازع ہے تو اسے باہمی بات چیت کے ذریعہ ہی حل کیا جاسکتا ہے۔‘

بھارت نے چین کی متنازع سرحد کے قریب سڑکوں کی تعمیر کےایک منصوبے کا بھی اعلان کیا ہے جس پر چین کے اعتراض کا جواب دیتے ہوئے مسٹرسنگھ نے کہا کہ: ’چین اور بھارت کے درمیان اگر سرحد پر کوئی تنازع ہے تو اسے بھی بات چیت کے ذریعہ ہی حل کیا جانا چاہیے۔‘

لیکن انڈیا میں بہت سے تجزیہ نگاروں کا خیال ہے کہ حکومت نے پاکستان سے بات چیت کا سلسلہ بند کر کے غلطی کی ہے۔ کانگریس کے رہنما اور سابق وزیر خزانہ پی چدمبرم نے بھی جمعہ کو کہا کہ وزیر اعظم اگرچے یہ دعوی کرتے ہیں کہ پاکستان کو خاموش کردیا گیا ہے لیکن ایل او سی پر فائرنگ کا سلسلہ اب بھی جاری ہے۔