بھارت: ٹیٹو کا رجحان اور مقبول ٹیٹو

Image caption گذشتہ چند برسوں کے دوران بھارت کے نوجوان طبقے میں ٹیٹو کا چلن بڑھا ہے

بھارت کے معروف شہر ممبئی میں حال ہی میں ہونے والے ایک ٹیٹو فیسٹیول میں ملک اور بیرون ملک سے آنے والے فنکاروں سے ٹیٹو بنوانے کے لیے شائقین کی ایک بھیڑ امڈ پڑی۔

بھارت کے لیے ٹیٹو کوئی نئی بات نہیں ہے۔ پرانے زمانے میں بعض علاقوں اور طبقوں میں لوگوں کے نام، ان کی پیدائش کی تاریخ وغیرہ بچوں کی پیدائش کے وقت ہی ان کے ہاتھ پر لکھے جانے کا بھی رواج رہا ہے۔

تاہم حال میں مغربی ثقافت کے زیر اثر ہندوستان کے بڑے شہروں میں ٹیٹو کی مقبولیت میں اضافہ ہوا ہے۔

گذشتہ چار پانچ برسوں میں نہ صرف ٹیٹو بنوانے والوں کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے بلکہ ٹیٹو فنکاروں کی تعداد میں بھی اضافہ ہوا ہے۔

نو سال سے اس کاروبار سے منسلک ٹیٹو آرٹسٹ روشن کہتے ہیں: ’جب میں نے اس میدان میں قدم رکھا تھا تو اس کے بارے میں لوگوں کا نظریہ انتہائی تنگ تھا۔ لوگ کہتے تھے کیا گاؤں سے آئے ہو!‘

Image caption بھارت میں مقبول ترین ٹیٹو مذہبی عقیدت پر مبنی ہے

اسی طرح ٹیٹو آرٹسٹ ارچنا کا کہنا ہے کہ ’جب میں نے بارھویں میں اپنے جسم پر ٹیٹو بنوایا تھا تب مجھے لوگ دوسرے سیارے کے باسی کے طور پر دیکھتے تھے۔ ہمارے اس کاروبار کو کوئی قدر کی نگاہ سے نہیں دیکھتا تھا۔‘

تمام ٹیٹو آرٹسٹ خود کو فنکار کہتے ہیں۔ فلموں میں اداکاروں کے ٹیٹو دیکھ کر لوگوں میں اس کی مقبولیت میں اضافہ ہوا ہے اور نگاہ کم سے دیکھنے کا چلن بھی کم ہوا ہے۔

کسی دوسری چیز کی طرح ٹیٹو کے متعلق بھی یہ بات صادق نظر آتی ہے کہ مختلف علاقوں کی پسند بھی مختلف ہے۔ شمالی ہندوستان میں زیادہ تر لوگ دیوی دیوتاؤں کی تصاویر بنواتے ہیں جن میں ’شیو‘، ’شیر‘ اور ’اوم‘ وغیرہ آتے ہیں جبکہ جنوبی بھارتی لوگ ’تروپتی‘ کا ٹیٹو بنواتے ہیں۔ بہر حال یہ سب مذہبی عقیدت کے ٹیٹو ہیں۔

روشن کہتے ہیں: ’ہندوستان میں مذہب پر مبنی اساطیری ٹیٹو مقبول ہونے کی ایک وجہ یہ ہے کہ یہ ٹیٹو لڑکیوں کے لیے محفوظ ہیں کیونکہ انھیں بنوانے سے خاندان والے نہیں روکتے ہیں۔‘

Image caption اس کے فنکار بتاتے ہیں کہ اس شعبے میں کمائی اچھی ہے

تاہم وہ یہ بھی مانتے ہیں کہ اساطیری ٹیٹو بنانا سب سے مشکل ہے کیونکہ اساطیری کرداروں کی تصاویر انتہائی شاندار ہوتی ہیں اور انھیں بنانے میں وقت بہت لگتا ہے۔

تمام ٹیٹو آرٹسٹ کا خیال ہے کہ اگر آپ کا کام صاف اور اچھا ہے تو اس میں کمائی بہت ہے۔ اس میں استعمال کی جانے والی روشنائي کے حساب سے اس کی قیمت فی انچ رکھی جاتی ہے۔

Image caption اساطیری کرداروں پر مبنی ٹیٹو بنانا انتہائی مشکل ہے

ایک ٹیٹو بنانے کی ابتدائی قیمت ایک ہزار روپے سے لے کر ساڑھے تین ہزار روپے تک ہو سکتی ہے۔

اسی بارے میں