شدت پسند حملوں کے سائے میں مودی کا کشمیر دورہ

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption مرکز میں بر سر اقتدار بھارتیہ جنتا پارٹی کشمیر میں بھی اقتدار میں آنے کے لیے ضروری 44 نشستوں کو حاصل کرنے کے لیے سرگرمی سے انتخابی مہم چلا رہی ہے

بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی پیر کو بھارت کے زیر انتظام کشمیر کے سامبا اور سرینگر شہروں میں دو انتخابی جلسوں سے خطاب کریں گے۔

دوپہر ساڑھے 12 بجے مودی سامبا میں ایک جلسے سے خطاب کرنے کے بعد سری نگر روانہ ہوں گے جہاں وہ سہ پہر دو بجے شیر کشمیر سٹیڈیم میں انتخابی جلسے سے خطاب کریں گے۔

ریاست میں 25 نومبر اور دو دسمبر کو دو مراحل میں ہونے والے انتخابات میں ریکارڈ ووٹ ڈالے گئے تھے۔

قابل ذکر ہے کہ مرکز میں بر سر اقتدار بھارتیہ جنتا پارٹی کشمیر میں بھی اقتدار میں آنے کے لیے ضروری 44 نشستیں حاصل کرنے کے لیے سرگرم انتخابی مہم چلا رہی ہے۔ کشمیر میں اسمبلی کی کل 87 نشستیں ہیں۔

بی جے پی نے منصوبہ بنایا ہے کہ سرینگر کے جلسے میں کم از کم ایک لاکھ لوگ آئیں اور اس کے لیے مقامی رہنماؤں کو ذمہ داریاں سونپی گئی ہیں۔

جلسے کی ذمہ داری سنبھالنے والے بی جے پی کے رہنما الطاف ٹھاکر نے بی بی سی کو بتایا کہ ’لوگوں کو جلسے کے مقام تک لانے کے لیے تین ہزار بسیں کرائے پر لی گئی ہیں۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption کشمیر میں اسمبلی کی کل 87 نشستیں ہیں اور پہلے دو مرحلوں میں ریکارڈ ووٹ ڈالے گئے تھے

آنے والے لوگوں کو تکلیف سے بچانے کے لیے حفاظتی انتظامات کو قدرے ’پوشیدہ‘ رکھا گیا ہے۔

دلچسپ بات یہ ہے کہ انتخابی مہم کے دوران بی جے پی نے آرٹیکل 370 اور افسپا (اے ایس ایف پی اے) جیسے مسائل سے علیحدگی اختیار کر رکھی ہے جبکہ بی جے پی کو گھیرنے کے لیے نیشنل کانفرنس کا زور پوری طرح سے آرٹیکل 370 پر ہی رہا ہے۔

بی جے پی کا کہنا ہے کہ اس معاملے پر بحث جاری ہے اور اسے انتخابی مہم کا حصہ بنانے کی ضرورت نہیں ہے۔

مبصرین کے مطابق اس جلسے سے قبل قیاس آرائیاں کی جا رہی ہیں کہ بھارتی وزیر اعظم آج کے جلسے میں پاکستان سے دہشت گردی کی پشت پناہی بند کرنے کے لیے کہہ سکتے ہیں اور کشمیر میں امن قائم کرنے کا پیغام دے سکتے ہیں۔

تین دن پہلے ہی بارہ مولہ ضلعے کے اوڑی سیکٹر میں ایک فوجی کیمپ پر شدت پسند حملے میں 23 سکیورٹی اہل کار مارے گئے تھے۔ اس حملے میں تمام چھ شدت پسند ہلاک ہو گئے تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption اس قبل بھی بھارتی وزیر اعظم کشمیر کا کئي بار دورہ کر چکے ہیں

اطلاعات کے مطابق بھارتی وزیر اعظم گذشتہ دنوں ہلاک ہونے والے سکیورٹی اہلکاروں کو خراج عقیدت پیش کرنے کے لیے فوج کے بادامي باغ ہیڈکوارٹر جائیں گے۔

تیسرے مرحلے میں نو دسمبر کو 16 اسمبلی حلقوں میں ووٹ ڈالے جائیں گے جن میں اوڑي، رافيہ آباد، سوپور، سگراما، بارہ مولہ، گلمرگ، پٹن، چھدورا، بڈگام، بيرواہ، خان صاحب، چرار شریف، ترال، پامپور، پلوامہ اور راج پورہ شامل ہیں۔

چوتھے اور پانچویں مرحلے میں 14 اور 20 دسمبر کو ووٹ ڈالے جائیں گے جبکہ ووٹوں کی گنتی 23 دسمبر کو ہوگی۔