ہلمند: شادی کی تقریب میں راکٹ گرنے سے 20 ہلاک

Image caption بدھ کو ہی افغانستان میں 13 برس کے بعد امریکہ اور نیٹو افواج کا جنگی مشن اپنے اختتام کو پہنچا ہے

افغانستان میں ایک شادی کی تقریب میں راکٹ گرنے سے کم از کم 20 افراد ہلاک اور 40 سے زیادہ زخمی ہوگئے ہیں۔

یہ واقعہ بدھ کو صوبہ ہلمند کے ضلع سنگین میں افغان فوجیوں اور طالبان شدت پسندوں کے مابین لڑائی کے دوران پیش آیا۔

اس حملے میں ہلاک اور زخمی ہونے والوں میں عورتیں اور بچے بھی شامل ہیں۔

راکٹ کا نشانہ بننے والے مکان کے مالک عبدالحلیم کا کہنا ہے کہ جب یہ حملہ ہوا تو مہمان دلھن کے استقبال کے لیے مکان کے باہر جمع تھے۔

ان کا کہنا ہے کہ خود ان کے نو بچے اس واقعے کے بعد سے لاپتہ ہیں۔

’میں نے صرف جسموں کے ٹکڑے جمع کیے ہیں۔ میں نہیں جانتا کہ یہ میرے بچوں کے ٹکڑے ہیں یا کسی اور کے۔‘

سنگین کی پولیس کے ترجمان فرید احمد عبید نے خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس کو بتایا کہ حملے میں کم از کم 45 افراد زخمی ہوئے ہیں جنھیں لشکر گاہ میں واقع ہسپتال لے جایا گیا ہے۔

خیال رہے کہ بدھ کو ہی افغانستان میں 13 برس کے بعد امریکہ اور نیٹو افواج کا جنگی مشن اپنے اختتام کو پہنچا ہے۔

اب افغانستان میں سکیورٹی کی ذمہ داریاں ساڑھے تین لاکھ ارکان پر مشتمل افغان سکیورٹی فورسز نے سنبھال لی ہیں جنھیں طالبان کی جانب سے مزاحمت کا سامنا ہے۔

افغانستان میں سنہ 2014 افغان سکیورٹی فورسز اور شہریوں کے لیے مہلک ترین رہا ہے اور اس دوران پانچ ہزار فوجی اور پولیس اہلکار اور اندازاً دس ہزار شہری حملوں میں ہلاک یا زخمی ہوئے ہیں۔

اسی بارے میں