راہول گاندھی کی ’چھٹی‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption کانگریس پارٹی گذشتہ برس مئی سے شدید مشکلات کا شکار ہے

بھارت میں کانگریس پارٹی کے نائب صدر اور سونیا گاندھی کے بیٹے راہل گاندھی نے چند ہفتوں کے لیے’چھٹی‘ لی ہے تاکہ وہ حال ہی میں پیش آنے والے واقعات اور پارٹی کے لیے مستقبل کی حکمت عملی پر غور کرسکیں۔

کانگریس پارٹی کی صدر سونیا گاندھی نے ایک ٹی وی چینل سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ’وہ چند ہفتوں کی چھٹی پر ہیں، انھیں کچھ وقت چاہیے ۔۔۔ اس بارے میں ہمیں جو بھی کہنا وہ کہا جاچکا ہے ۔۔۔ وہ چھٹی پر جاچکےہیں۔‘

لوک سبھا میں کانگریس پارٹی کے لیڈر ملک ارجن کھارگے نے کہا کہ ’وہ چھٹی پر ہیں، ٹھیک ہے، میں اس بارے میں کچھ نہیں کہنا چاہتا، کام ہوتا ہے تو ہم اجازت لیتے ہیں، ہم ان کی اور میڈم سونیا گاندھی کی رہنمائی میں کام کرتے رہیں گے۔‘

خبر رساں ادارے پی ٹی آئی نے کانگریس پارٹی کے ذرائع کے حوالے سے کہا ہے کہ ’راہل گاندھی نے پارٹی صدر سونیا گاندھی سے کچھ وقت مانگا ہے کیونکہ وہ اپریل میں کل ہند کانگریس کمیٹی کے اجلاس سے پہلے حالیہ واقعات پر غور و فکر کرسکیں۔۔۔اس کے بعد وہ دوبارہ اپنی ذمہ داریاں سنبھال لیں گے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ THINKSTOCK
Image caption دگ وجے سنگھ نے کہا تھا کہ دہلی کے انتخابات میں راہل گاندھی اسی نئے انداز سے مہم چلانا چاہتے تھے جو عام آدمی پارٹی نے اختیار کیا ہے

کانگریس پارٹی گذشتہ برس مئی سے شدید مشکلات کا شکار ہے اور پارلیمانی انتخابات سے لے کر اب تک اسے لگاتار انتخابی ناکامیوں کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ لیکن پارٹی کو سب سے زیادہ شرمندگی کا سامنا دہلی کے انتخابات میں کرنا پڑا جہاں اسے 70 میں سے ایک بھی سیٹ نہیں ملی حالانکہ ریاست میں وہ 15 سال سے حکومت کر رہی تھی۔

راہل گاندھی کی ’چھٹی‘ کی خبر بہت غیرمعمولی ہے کیونکہ اگر انھیں پارٹی کی حکمت عملی کے بارے میں غور کرنا ہے تو چھٹی لینے کی کیا ضرورت ہے۔ اور ویسے بھی ان کے بارے میں عام تاثر یہ ہے کہ وہ کل وقتی سیاست نہیں کرتے۔

انتخابی شکستوں کے بعد کانگریس کے ہی بہت سے رہنماؤں نے کھل کر کہا ہےکہ انھیں باقاعدہ طور پر پارٹی کی ذمہ داری سنبھالنی چاہیے۔ تجزیہ نگار بھی انھیں تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے یہ کہتے رہے ہیں کہ یا تو وہ خود قیادت فراہم کریں یا یہ ذمہ داری کسی اور کو سونپ دی جائے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption سونیا گاندھی نے ایک ٹی وی چینل سے بات کرتے ہوئے کہا کہ راہل چند ہفتوں کی چھٹی پر ہیں، انھیں کچھ وقت چاہیے

تجزیہ نگاروں کے مطابق کانگریس میں نوجوان حلقے اور بزرگ قیادت کے درمیان بھی رسہ کشی چل رہی ہے اور نوجوان رہنماؤں کا کہنا ہے کہ پارٹی کے احیا کے لیے نئے انداز کی سیاست کرنے کی ضرورت ہے۔

کچھ دن پہلے پارٹی کے ایک جنرل سکریٹری دگ وجے سنگھ نے کہا تھا کہ دہلی کے انتخابات میں راہل گاندھی اسی نئے انداز سے مہم چلانا چاہتے تھے جو عام آدمی پارٹی نے اختیار کیا ہے لیکن انھیں ایسا نہیں کرنے دیا گیا۔ ان کے اس بیان سے یہ مطلب اخذ کیا گیا تھا کہ پارٹی میں بزرگ رہنماؤں کی لابی اب بھی حاوی ہے۔

قیاس آرائیاں تو جاری ہیں لیکن ابھی یہ واضح نہیں ہے کہ راہل گاندھی کی اس چھٹی کی اصل وجہ کیا ہے؟

اسی بارے میں