بھارت: کشمیر کا متنازع نقشہ دکھانے پر الجزیرہ کی نشریات بند

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption بھارت میں پہلے بھی کشمیر کے نقشے کے بارے میں تنازعات سامنے آ چکے ہیں

بھارت میں حکومت نے کشمیر کو نقشے میں بھارت کے علاوہ چین اور پاکستان کا حصہ دکھانے پر الجزیرہ ٹی وی چینل کی نشریات کو پانچ دن کے لیے بند کر دیا ہے۔

الجزیرہ نیوز چینل نے بدھ کو چینل کی سکرین پر نیلی سکرین دکھاتے ہوئے کہا کہ نشریات پیر تک دستیاب نہیں ہوں گی۔

بھارت کا کہنا ہے کہ الجزیرہ نے غلط نقشے میں کشمیر کو چین، بھارت اور پاکستان میں تقسیم کر کے دکھایا۔

پاکستان اور بھارت دونوں کشمیر پر دعویٰ کرتے ہیں اور اس مسئلے پر دونوں ممالک کے درمیان جنگیں بھی ہو چکی ہے جبکہ اکثر اوقات جنگ بندی کے معاہدے کے باوجود متنازع خطے کو تقسیم کرنے والی عبوری سرحد پر جھڑپیں بھی ہوتی رہتی ہیں۔

بھارتی حکومت کی جانب سے منظور کیے جانے والے نقشوں میں اب کشمیر کے پورے خطے کو بھارت کا حصہ دکھایا جاتا ہے جبکہ دیگر نقشوں میں کشمیر کو ایل او سی کے ذریعے پاکستان اور بھارت کے درمیان منقسم دکھایا جاتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ایل او سی کشمیر کے متنازع خطے کو تقسیم کرتی ہے

بدھ کو بھارت میں الجزیرہ کے بھارت میں پروگرام نشر نہیں ہوئے اور نیلی سکرین پر صرف یہ دکھایا جا رہا ہے کہ وزارتِ اطلاعات و نشریات کی ہدایت کے مطابق 27 اپریل تک چینل دستیاب نہیں ہو گا۔

الجزیرہ کے بھارت میں بیورو چیف انمول سکسینہ نے فرانسیسی خبر رساں ایجنسی اے ایف پی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ چینل نے وزارت سے رابطہ کیا ہے اور امید ہے کہ نشریات بند کرنے کے احکامات واپس لے لیے جائیں گے۔

اطلاعات کے مطابق بھارتی حکام نے رواں ماہ کے شروع میں الجزیرہ کی نشریات بند کرنے کا حکم دیا تھا۔

بھارتی حکام اکثر اوقات کشمیر پر بھارتی دعوے کے بارے میں درست طریقے سے نہ بتانے پر بین الاوقوامی میڈیا پر تنقید کرتے رہتے ہیں۔

بین الاقوامی میڈیا ادارے بھارتی حکومت پر سنسرشپ پر الزام عائد کر چکے ہیں۔

اسی بارے میں