جان کیری جنوبی بحیرۂ چین میں مزاحمت روکنے کے لیے کوشاں

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption چین خبردار کر چکا ہے کہ وہ اپنے قانونی حقوق اور مفادات کا دفاع کرے گا

امریکی وزیرِ خارجہ جان کیری بیجنگ کو جنوبی بحیرۂ چین میں تحکمانہ انداز ترک کرنے پر آمادہ کرنے کے لیے کوشش کریں گے۔

ایک امریکی عہدے دار کا کہنا ہے کہ جان کیری متنازع پانیوں کی بازیابی کے لیے چین کے منصوبے پر اپنے خدشات کا اظہار کریں گے۔

متنازعہ جزائر پر چین کی حدبندی

ادھر چین خبردار کر چکا ہے کہ وہ اپنے قانونی حقوق اور مفادات کا دفاع کرے گا۔

خیال رہے کہ چین پورے جنوبی بحیرۂ چین کی ملکیت کا دعوے دار ہے تاہم اس پر برونائی، تائیوان، فلپائن، ویت نام اور ملائشیا بھی اپنی ملکیت کا دعویٰ کرتے ہیں۔

امریکی وزیرِ خارجہ ایک ایسے وقت میں دورہ چین کر رہے ہیں جب وہاں بھارتی وزیراعظم نریندر مودی پہلے ہی موجود ہیں۔

جمعے کو وزیراعظم مودی نے اپنے چینی ہم منصب کے ساتھ مذاکرات میں سرحدی تنازعات کا منصفانہ حل نکالنے پر اتفاق کیا۔

سخت اقدامات

امریکی وزیرِ خارجہ بیجنگ میں صدر شی جن پنگ سمیت اعلیٰ عہدے داروں سے ملاقات کریں گے۔

امریکی محکمۂ خارجہ کی جانب سے جاری ہونے والے بیان میں کہا گیا ہے کہ جان کیری کے دورۂ چین کے ایجنڈے میں سب سے اہم نکتہ متنازع پانیوں میں چین کی سرگرمیوں پر بات کرنا ہے۔

امریکہ کا کہنا ہے کہ چین 2000 ایکڑ رقبے کی ملکیت کا دعوٰ ی کرتا ہے تاہم یہ کہا جا رہا ہے کہ علاقائی حدود بڑھانے کے دعوے کی اصل وجوہات ابھی واضح نہیں ہیں۔

چینی وزارتِ خارجہ کے ترجمان نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ چین خطرے کی صورت میں سخت اقدامات کرے گا۔

بیجنگ نے ان اطلاعات پر بھی تشویش کا اظہار کیا ہے جن میں کہا گیا ہے کہ شاید امریکہ اپنے فوجی بحری جہازوں اور جیٹ طیاروں کو جنوبی بحیرۂ چین بھیج رہا ہے۔

اسی بارے میں