گجرات کے سیلاب میں سات شیر ہلاک

Image caption مئی میں جاری کیے جانے والے اعدادوشمار کے مطابق گیر میں ایشیاٹک نسل کے شیروں کی تعدا 523 بتائی گئی تھی

بھارت کی مغربی ریاست گجرات میں سیلاب کی وجہ سے جہاں انسانوں کا جانی نقصان ہوا وہیں جانور بھی اس سے متاثر ہوئے ہیں۔

بھارتی اخبار دا ہندوستان ٹائمز نے حکام کے حوالے سے خبر دی ہے کہ ایشیاٹک نسل کے کم از کم سات شیر اس سیلاب کی وجہ سے ہلاک ہو گئے ہیں جبکہ امریلی بھاونگر اور گیر کے اضلاع میں ایک درجن سے زیادہ شیر لاپتہ ہیں۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق سیلاب سے مختلف اقسام کے کم از کم پانچ ہزار جانور ہلاک ہو گئے ہیں۔

بارش کے پانی میں کمی کے بعد محکمۂ جنگلات کے اہلکاروں کو سات شیروں کی لاشیں ملیں جن میں ایک تین ماہ کے شیر کے بچے کی بھی لاش تھی۔

خیال رہے کہ گجرات میں گیر کے جنگل ایشیاٹک نسل کے شیروں کی سب سے بڑی پناہ گاہ ہے اور حال میں کی جانے والے شیروں کی گنتی میں ان کی تعداد میں ریکارڈ اضافہ درج کیا گیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ MINISTRY OF DEFENCE
Image caption گجرات کے سیلاب میں کم از کم 70 افراد ہلاک ہوئے ہیں جبکہ لاکھوں اس سے متاثر ہیں

جنگلی حیات کے چیف کنزرویٹر ڈی سی پنت نے بتایا ’محکمۂ جنگلات کے حکام اور گارڈز نے جنگل کو چھان مارا ہے تاہم بعض علاقوں میں ابھی تک رسائی حاصل نہیں ہو سکی ہے کیونکہ سلاب میں سڑکیں بہہ گئی ہیں۔‘

مقامی باشندوں کے حوالے سے اخبار کا کہنا ہے تین شیر بدھ کو سیلاب کی زد میں آ کر بہہ گئے تھے۔

بھارتی خبر رساں ایجنسی پی ٹی آئی کو امریلی ضلعے میں محکمۂ جنگلات کے نائب کنزرویٹر ایم آر گجر نے بتایا ’محکمۂ جنگلات کی ایک ٹیم کو دو ایشاٹک شیروں کی لاشیں ملیں ہیں جن میں ایک پانچ سال کا نر جبکہ ایک تین ماہ کا مادہ بچہ شامل ہے۔

انھوں نے مزید بتایا ’اس کے علاوہ ہمیں چھ سے آٹھ سال کی عمر کی ایک شیرنی کی لاش امریلی ضلعے کے بوادی گاؤں سے ملی ہے۔‘

بھاؤنگر میں محکمۂ جنگلات کے نائب کنزرویٹر جی ایس سنگھ نے پی ٹی آئی کو بتایا ’ہمیں دو شیروں کی لاشیں گراجیاں گاؤں سے ملی ہیں جن میں ایک نر اور ایک مادہ ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ MINISTRY OF DEFENCE
Image caption سیلاب سے راستے بہہ گئے ہیں

خیال رہے کہ اس سیلاب میں دوسرے جانور بھی ہلاک ہوئے ہیں جن میں نیل گائے، ہرن اور جنگلی سور وغیرہ شامل ہے۔

مسٹر سنگھ نے بتایا کہ تقریبا ڈیڑھ سو نیل گائے کی لاشوں کے علاوہ تین چیتل ہرن کی لاشیں بھی ملی ہیں۔

گیر کے جنگل سوراشٹر کے علاقے میں آٹھ اضلاع پر محیط ہیں اور اس کا رقبہ تقریبا 22 ہزار مربع کلومیٹر ہے۔

اسی بارے میں