افغانستان میں دو دھماکوں میں 12 شہری ہلاک

دھماکہ تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption طالبان اکثر سکیورٹی فورسز کو بارودی سرنگوں کے ذریعے نشانہ بناتے رہتے ہیں

افغانستان میں سکیورٹی اہلکاروں نے کہا ہے کہ ملک کے مشرقی اور شمالی علاقوں میں دو مختلف بم دھماکوں میں کم از کم بارہ عام شہری ہلاک ہوئے ہیں۔

مشرقی صوبے کاپسیا کے پولیس کے سربراہ جنرل عبدالکریم فائق نے کہا کہ سڑک کے کنارے لگی ایک بارودی سرنگ پھٹنے سے ایک گاڑی میں بیٹھے دس عام شہری ہلاک اور کم از کم سات زخمی ہو گئے۔

شمالی صوبے قندوز میں بھی سڑک کنارے لگی ایک بارودی سرنگ پھٹنے سے دو عام شہریوں کے ہلاک ہونے کی اطلاع ہے۔

جس وقت بارودی سرنگ پھٹی اس وقت پولیس کی ایک گاڑی وہاں سے گزر رہی تھی۔

ابھی تک کسی گروہ نے اس کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے۔

جنرل فائق نے کہا کہ کاپسیا صوبے میں ہونے والا حملہ ضلع تاگاب میں ہوا جہاں شدت پسند عموماً افغان سکیورٹی فورسز پر حملے کرتے رہتے ہیں۔

شمالی صوبے قندوز کی پولیس کے سربراہ کے ترجمان سید سرور حسینی نے بتایا کہ جب پولیس کی ایک گاڑی سڑک کنارے نصب کی گئی ایک بارودی سرنگ سے ٹکرائی تو دھماکہ ہوا جس کی وجہ سے دو عام شہری ہلاک ہو گئے۔

انھوں نے بتایا کہ بم دھماکے میں چار عام شہری اور دو پولیس والے زخمی بھی ہوئے ہیں۔

کسی بھی گروہ نے فوری طور پر کاپسیا اور قندوز کے دھماکوں کی ذمہ داری قبول نہیں کی۔

خیال رہے کہ افغان طالبان اکثر ملک کے کئی حصوں میں افغان فوج یا پولیس فورسز پر حملے کرنے کے لیے یا تو سڑک کنارے بارودی سرنگیں کا استعمال کرتے ہیں یا پھر خودکش دھماکے کرتے ہیں۔

اسی بارے میں