چین: سپریم کورٹ کے نائب صدر سے بدعنوانی کی تفتیش

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption سپریم کورٹ کی ویب سائٹ سے نائب صدر کی سوانح عمری بھی ہٹا دی گئی ہے

چین کی سپریم کورٹ کے نائب صدر سے ملک کی انسداد بدعنوانی کا ادارہ تفتیش کر رہا ہے۔

سینٹرل کمیشن فار ڈسپلن انسپیکشن کی طرف سے جاری کردہ بیان کے مطابق شی شیاؤمنگ سنہ 1982 سے سپریم پیپلز کورٹ سے وابستہ ہیں اور ان پر ’ڈسپلن کی شدید خلاف ورزی‘ کے الزامات ہیں۔

اس حوالے سے مزید تفصیلات مہیا نہیں کی گئیں۔

خیال رہے کہ چین کی حکمراں کمیونسٹ پارٹی سیاسی بدعنوانی کے خلاف مہم میں متعدد اہلکاروں کو گرفتار کر چکی ہے۔

گذشہ ماہ چین کے سابق سکیورٹی چیف ژو یونگ کانگ کو عمر قید کی سزا سنائی گئی تھی۔ کمیونسٹ دورِ حکومت میں وہ بے ضابطگیوں کے الزام میں مقدمے کا سامنے کرنے والے سینیئر ترین سیاست دان بھی ہیں۔

سینٹرل کمیشن فار ڈسپلن انسپیکشن کی ویب سائٹ پر جاری کیے گئے مختصر بیان کے مطابق شی شیاؤمنگ سے ’شدید ڈسپلنری خلاف ورزیوں اور قانون شکنی‘ کے حوالے سے تفتیش کی جارہی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption گذشہ ماہ چین کے سابق سکیورٹی چیف ژو یونگ کانگ کو عمر قید کی سزا سنائی گئی تھی

بیان میں یہ نہیں کہا گیا کہ ان کو عہدے سے برطرف کر دیا گیا ہے یا نہیں۔

61 سالہ شی شیاؤمنگ اقتصادی قانون کے ماہر ہیں اور حال ہی میں چین کے سول کوڈ سے متعلق قائم کیے گئے تحقیقاتی گروپ کی سربراہی بھی انھیں سونپے جانے کے امکانات تھے۔

انھوں نے 1970 کی دہائی میں ایک پولیس اہلکار سے چین کی عدلیہ کے اعلیٰ ترین عہدے کا سفر طے کیا۔

دوسری جانب چین کی کھیلوں کی انتظامیہ کے نائب سربراہ شیاؤ تیان سے بھی تفتیش کی جا رہی ہے۔

اسی بارے میں