بھارت میں پاک ہائی کمیشن کی حریت رہنماؤں کو دعوت

تصویر کے کاپی رائٹ AP

بھارت میں پاکستان کے ہائی کمیشن نے دونوں ممالک کے درمیان ہونے والی قومی سلامتی کے مشیروں کی بات چیت سے قبل ایک استقبالیہ میں بھارت کے زیر انتظام کشمیر کے رہنماؤں کو مدعو کیا ہے۔

اطلاعات کے مطابق اس میں حریت کانفرنس کے سینیئر رہنما سید علی شاہ گیلانی اور میر واعظ عمر فاروق شامل ہیں۔

بھارتی اخبار ’دا ہندو‘ کے مطابق میر واعظ عمر فاروق نے دعوت نامے کی تصدیق کرتے ہوئے اس میں شرکت کی بات کہی ہے۔

اخبار کے مطابق انھوں نے کہا ہے کہ ’ہمارے خیال سے بھارت اور پاکستان کو مذاکرات کرنا چاہیے۔ میں میڈیا اور حزب اختلاف کی پارٹیوں سے اپیل کرتا ہوں کہ اس دعوت نامے کو سیاسی رنگ نہ دیں۔‘

خیال رہے کہ بھارت اور پاکستان کے درمیان سلامتی امور کے اعلی سطحی مذاکرات کے لیے پاکستان کے قومی سلامتی کے مشیر سرتاج عزیر بھارت کا دورہ کر رہے ہیں۔

یہ مذاکرات رواں ماہ 23 اگست کو ہو رہے ہیں۔

Image caption علی شاہ گیلانی کو سخت گیر علیحدگی پسند رہنماؤں میں شمار کیا جاتا ہے

خبر رساں ادارے روئیٹرز کے مطابق تجزیہ کاروں نے اسے بھارت کو ناراض کرنے کی کوشش سے تعبیر کیا ہے۔

ادارے کے مطابق دہلی میں ساؤتھ ایشیا اینالیسس گروپ کے ڈائرکٹر ایس چندر شیکھرن نے کہا: ’یہ بھارت کو ناراض کرنے کی دانستہ کوشش ہے۔‘

پاکستانی ہائی کمیشن کے ایک اہل کار نے دعوت نامے ارسال کیے جانے کی بات کہی لیکن اس پر مزید کچھ کہنے سے گریز کیا۔

خیال رہے کہ اس سے ایک سال قبل جب پاکستان نے وزرائے خارجہ سطح کی بات چیت سے قبل کشمیر کے علیحدگی پسند رہنماؤں سے بات چیت کی بات کہی تھی تو بھارت نے امن مذاکرات کو منسوخ کر دیا تھا۔

اس وقت بھارت نے پاکستان پر اندرونی معاملے میں دخل اندازی کا الزام لگایا تھا۔

اسی بارے میں