ہندو مسلمان آپس میں نہیں، غربت سے لڑیں: مودی

تصویر کے کاپی رائٹ PTI

بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی نے داردی میں گائے کا گوشت کھانے کی پاداش میں ایکمسلمان کی ہلاکت کے واقعے کے دو ہفتے بعد اس بارے میں اپنی خاموشی توڑتے ہوئے جمعرات کو ایک انتخابی جلسے میں تقریر کرتے ہوئے کہا کہ ہندوؤں اور مسلمانوں کو فیصلہ کرنا ہو گا کہ انھوں نے آپس میں لڑنا ہے یا غربت سے۔

دادری کے واقعے کی براہِ راست مذمت کیے بغیر نریندر مودی نے کہا کہ مسلمانوں اور ہندوؤں کو غربت کے خلاف لڑنا چاہیے۔

حزب اختلاف کی جماعتوں اور دیگر حلقوں کی طرف سے وزیر اعظم پر دباؤ ڈالا جا رہا تھا کہ وہ اس واقعے کی مذمت کریں۔

بہار میں انتخابی جلسے سے خطاب کرتے ہوئے نریندر مودی نے عوام سے کہا کہ وہ سیاست دانوں کی طرف سے دیے جانے والے غیر مہذبانہ بیانات پر دھیان نہ دیں۔

ہندو گائے کو مقدس سمجھتے ہیں اور اس کو ذبح کرنے کے سخت خلاف ہیں۔ اتر پردیش کے قریب ایک گاؤں دادری میں انتہا پسند ہندوؤں کے ایک ہجوم نے محمد اخلاق نامی شخص کے گھر پر حملہ کر کے اسے ہلاک کر دیا تھا، جبکہ اس کا بیٹا شدید زخمی ہو گیا تھا۔

مودی کی حکومت ملکی سطح پر گائے ذبح کرنے پر پابندی عائد کرنے کی حامی ہے لیکن مسلمان اور دیگر مذہبی اقلیتیں گائے کا گوشت کھاتی ہیں۔

ادھر کشمیر میں مودی کی جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی نے ریاستی اسمبلی میں ایک مسلمان رکن کو اپنے گھر دعوت میں مہمانوں کی گائے کے گوشت سے تواضع کرنے پر زد و کوب کیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ PTI

کشمیر اسمبلی کے رکن رشید احمد نے کہا کہ انھوں نے اپنی نجی محفل میں مہمانوں کو بطورِ احتجاج گائے کا گوشت کھلایا تھا۔

حزب اختلاف کے رہنما عمر عبداللہ نے اسمبلی کے اجلاس سے یہ کہہ کر واک آؤٹ کیا کہ انھیں ہر اس شخص پر حملہ کر دینا چاہیے جو شراب پیتا ہے یا سؤر کا گوشت کھاتا ہے۔

اسمبلی میں بی جے پی کے نائب وزیر اعلیٰ نرمل سنگھ کا کہنا تھا کہ وہ رکن اسمبلی پر حملے کی تائید نہیں کر سکتے لیکن ساتھ ہی انھوں نے یہ بھی کہا کہ گائے کے گوشت سے تواضع کرنا درست نہیں۔

اسی بارے میں