’نریندر مودی بزدل اور نفسیاتی مریض ہیں‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption منگل کی صبح سے وزیر اعلیٰ کے دفتر میں موجود حکام کی آمد و رفت پر پابندی لگا دی گئی ہے

بھارت کے دارالحکومت دہلی کے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال نے کہا ہے کہ مرکزی تفتیشی بیورو سی بی آئی نے ان کے دفتر پر چھاپہ مارا ہے۔

کیجریوال نے ایک ٹویٹ میں اس چھاپے کے لیے وزیراعظم نریندر مودی کو ذمہ دار ٹھہرایا اور انھیں ’بزدل اور نفسیاتی مریض‘ کہا ہے۔

دوسری جانب سی بی آئی نے اس سے انکار کیا ہے۔ سی بی آئی کے ترجمان دیوپريت سنگھ نے کہا ہے کہ کیجریوال کے دفتر پر نہیں بلکہ وزیر اعلیٰ کے پرنسپل سیکریٹری راجندر کمار کے دفتر پر چھاپہ مارا گیا ہے۔

تاہم سی بی آئی کے دعووں کو مسترد کرتے ہوئے کیجریوال نے کہا کہ ’سی بی آئی جھوٹ بول رہی ہے۔‘

Image caption اروند کیجریوال نے ٹویٹ میں مودی کو بزدل اور نفسیاتی مریض کہا ہے

انھوں نے لکھا ہے کہ ’میرے دفتر پر چھاپہ مارا گیا ہے۔ راجندر کے بہانے وزیر اعلیٰ کے دفتر کی فائلوں کو دیکھا جا رہا ہے۔ مودی جی بتائیں کہ وہ کون سی فائل چاہتے ہیں؟‘

کیجریوال نے لکھا ہے کہ ’مودی جب سیاسی طور پر میرا مقابلہ نہیں کر پا رہے ہیں تو وہ اس طرح کی بزدلی پر اتر آئے ہیں۔‘

منگل کی صبح سے وزیر اعلیٰ کے دفتر میں موجود حکام کی آمد و رفت پر پابندی لگا دی گئی ہے۔

عام آدمی پارٹی کے ترجمان سوربھ بھاردواج نے اس چھاپے کو نفرت انگیز عمل قرار دیا ہے۔ ایک بھارتی ٹی وی چینل سے بات چیت میں بھاردواج نے کہا کہ ’مودی پر ہزاروں لوگوں کو موت کے گھاٹ اتارنے کا الزام ہے لیکن ان کے دفتر پر کبھی چھاپہ نہیں مارا گیا۔‘

بھارتی جنتا پارٹی کے رہنما وینکیا نائیڈو نے اس معاملے میں مرکزی حکومت کا دفاع کرتے ہوئے کہا کہ ’سی بی آئی ایک آزاد ادارہ ہے اور مرکزی حکومت سی بی آئی کی نگرانی نہیں کرتی۔‘

نائیڈو نے کہا کہ کیجریوال نے ہر چیز کے لیے مرکزی حکومت کو ذمہ دار ٹھہرانے کا فیشن بنا لیا ہے۔

عام آدمی پارٹی کے سینیئر رہنما کمار وشواس نے مرکزی حکومت پر حملہ کرتے ہوئے کہا کہ عوام نے بہار میں بی جے پی کو سبق سکھایا ہے اور اب پنجاب اور بنگال میں انھیں سبق سكھا‎ئےگي۔

اسی بارے میں