ہلمند کا ضلع سنگین طالبان کے’مکمل قبضے‘ میں

Image caption ہلمند کے شہر سنگین میں جاری جنگ کے دوران محصور فوجیوں کو رسد پہنچانے کا دعوی کیا گيا ہے

افغانستان سے اطلاعات ہیں کہ کئی دن سے جاری شدید لڑائی کے بعد افغان صوبے ہلمند کے جنوبی قصبہ سنگین پر اب طالبان کا مکمل قبضہ ہے۔طالبان نے ہلمند کے ضلع سنگین کے مرکز پر قبضہ کر لیا ہے۔

مقامی سینیٹر نے بتایا کہ طالبان نے بدھ کو پولیس سٹیشن اور سرکاری عمارت پر دھوا بولا تھا۔

سنگین ضلعے کی اہمیت کیوں ہے؟

افغان فورسز کو سنگین پر قبضہ قائم رکھنےمیں مشکلات

تاہم افغانستان کی وزارت دفاع کا کہنا ہے کہ علاقے میں لڑائی جاری ہے اور پولیس اور فوجیوں کے لیے فوجی رسد پہنچائی گئی ہے۔

افغان حکومت کا کہنا ہے کہ برطانوی افواج کو بھی افغان افواج کی مدد کے لیے ہلمند روانہ کیا گیا ہے۔

ایک مقامی شہری کے مطابق سنگین قبضے میں تمام بازار بند ہیں اور سڑکوں پر طالبان گشت کر رہے ہیں۔ انھوں نے بتایا کہ مقامی شہری اپنے گھروں میں محصور ہیں۔

ضلعے کے گورنر حاجی سلیمان شاہ نے بی بی سی کو بتایا کہ انھیں بدھ کو ہیلی کاپٹر کے ذریعے ضلعی ہیڈکوارٹر سے لشکر گاہ میں ایک فوجی اڈے پر پہنچایا گیا تھا۔ ان کے مطابق ان کے ہمراہ پندرہ زخمی سکیورٹی اہلکار بھی تھے۔

سنگین سے سات کلومیٹر دور افغان فوج کے ساتھ موجود ایک پولیس اہلکار اشفاق اللہ نے بی بی سی کو بتایا کہ ’پورا‘ علاقہ شدت پسندوں کے کنٹرول میں ہے۔

پولیس اہلکار کا کہنا تھا ’مدد کے لیے آنے والے دستوں کو ایک فاصلے پر اتارا گیا ہے۔۔ لیکن تمام سڑکیں بلاک ہیں اور شدت پسندوں کے کنٹرول میں ہیں۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ MOD
Image caption برطانیہ نے اپنے ایک فوجی دستے کو شورا بیک میں تعیناتی کے لیے روانہ کیا ہے

بی بی سی کے نامہ نگار جوناتھن مارکس کا کہنا ہے کہ سنگین کا معرکہ ہلمند صوبے پر قبضے کی وسیع لڑائی کا صرف ایک حصہ ہے۔

ہمارے نمائندے کے کہنا ہے کہ اگر یہ شہر طالبان کے ہاتھوں میں چلا جاتا ہے تو صوبے میں یہ حکومت کے لیے بڑی ناکامی ہوگی کیونکہ یہ علاقہ طالبان کی جنگ کا مرکز رہا ہے اور ہیروین کی تجارت کا اہم راستہ ہے اور پاکستان سے اس کی قربت اسے جنگی لحاظ سے اہم بناتی ہے۔

گذشتہ سال افغانستان سے نیٹو افواج کے بڑے پیمانے پر نکل جانے سے قبل یہ افغانستان میں اتحادی افواج کی سرگرمیوں کا اہم مرکز تھا۔

بی بی سی پشتو سروس کے ایک نامہ نگار کا کہنا ہے جس کا بھی اس پر قبضہ ہوگا پوست کی غیر قانونی تجارت کے ٹیکس پر اس کا کنٹرول ہوگا۔

اطلاعات کے مطابق منگل کے روز سارے دن جنگ جاری رہی اور پولیس ہیڈکوارٹر کو بچانے کے لیے افغان فوجی کوشاں نظر آئے جبکہ کہ اس ضلعے کے بارے میں متضاد خبریں آ رہی ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption سنگین شہر سے متضاد خبریں آ رہی ہیں

خیال رہے کہ سنگین کئی مرتبہ طالبان کے قبضے میں جا چکا ہے اور اس پر قبضے کی جنگ میں بہت سے افغان اور بین الاقوامی فوجی ہلاک ہو چکے ہیں۔

اس سے قبل گذشتہ روز برطانیہ کی وزارت دفاع نے کہا تھا کہ برطانیہ کے ایک فوجی دستے کو ’مشاورتی کردار‘ میں افغانستان کے ہلمند صوبے کے شورا بیک کیمپ میں تعینات کیا گیا ہے۔

جبکہ افغانستان میں غیرملکی فوجیوں کے جانے کے بعد اب بھی 12 ہزار غیر ملکی فوجی ہیں جو نیٹو کی قیادت میں ’ریزولیوٹ سپورٹ‘ کے تحت ہیں۔

اسی بارے میں