چین میں کان کے حادثے کے بعد مالک نے خود کشی کر لی

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption لن یی کے میئر ژانگ شوپنگ کے مطابق امدادی کاموں میں 700 سے زیاد اہلکار لگے ہوئے ہیں

چین کے مشرقی صوبے شانڈونگ میں جپسم کی ایک کان کے مالک نے کان کنوں کے کان میں پھنس جانے کے بعد خودکشی کرلی ہے۔

سرکاری میڈیا نے بتایا ہے کہ 17 کان کن ابھی تک وہاں پھنسے ہوئے ہیں اور امدادی عملہ ان تک پہنچنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

جمعے کو جب کان منہدم ہو‏‏ئی تھی تو اس میں ایک شخص ہلاک ہو گیا تھا جبکہ چار کان کن بچ نکلے تھے۔

اس کے بعد سے امدادی عملے نے کئی لوگوں کو کان سے نکالا ہے۔

چین میں صنعتی کارخانوں میں حادثات کی طویل تاریخ رہی ہے۔ چند دنوں قبل تعمیراتی ملبوں کے گرنے سے جنوبی چین میں ہلاکتیں ہوئی تھیں۔

چین کی سرکاری خبر رساں ایجنسی شن ہوا نے بتایا ہے کہ یورونگ کمپنی کے چیئرمین ما کونگبو نے سنیچر کو کان کے ایک کنویں میں چھلانگ لگا کر خود کشی کرلی۔

یہ واقعہ پنگ یی کاؤنٹی کے لن یی شہر میں کان کے منہدم ہونے کے دو دن بعد پیش آیا۔

کان کے دھنس جانے کی وجوہات کا علم نہیں ہو سکا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Xinhua
Image caption جپسم کی کان پنگ یی کاؤنٹی کے لن یی شہر میں ہے

امدادی عملے نے بعض لوگوں تک پہنچنے کے لیے ڈرل مشین سے کھدائی کی اور چند لوگوں کو بچایا جبکہ بعض لوگوں تک کھانے پینے کی چیزیں پہنچائی جا رہی ہیں۔

لن یی کے میئر ژانگ شوپنگ کے مطابق امدادی کاموں میں 700 سے زیاد اہلکار لگے ہوئے ہیں۔

شن ہوا نے بتایا ہے اب تک سات افراد کو بچا لیا گيا ہے۔

خیال رہے کہ جپسم کا استعمال تعمیراتی کاموں میں ہوتا ہے۔

خبررساں ادارے اے پی کا کہنا ہے کہ چین میں گذشتہ سال کان سے متعلق حادثات میں 931 افراد ہلاک ہوئے ہیں۔

جبکہ چند دنوں قبل تعمیراتی ملبے کے نیچے آنے والے 75 لاپتہ افراد کو اب مردہ تسلیم کر لیا گیا ہے۔

اسی بارے میں