ہریانہ میں جاٹوں کے پرتشدد احتجاج میں 10 افراد ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption روہتک میں کرفیو نافذ ہے اور فوج سڑکوں پر گشت کر رہی ہے

ہریانہ کے ڈائرکٹر جنرل آف پولیس وائی پی سنگھ نے کہا کہ ریاست میں جاری تشدد میں کم از کم دس افراد ہلاک جب تقریبا ڈیڑھ سو زخمی ہوئے ہیں۔ کشیدگی کے باعث آٹھ شہروں میں کرفیو نافذ کر دیا گیا ہے۔

خبر رساں ادارے اے این آئی کے مطابق انھوں نے بتایا کہ حالات قدرے بہتر ہوئے ہیں۔ 191 افراد کے خلاف مقدمہ درج کیا گيا ہے جبکہ تقریبا 45 افراد کو گرفتار کیا گيا ہے۔

ہریانہ میں پرتشدد احتجاج اور کرفیو تصاویر میں

انھوں نے کہا ’ہماری ترجیحات میں آج دہلی کے لیے پانی کی سپلائی جاری کرنا ہے۔‘

دوسری جانب دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال نے کہا ہے کہ دہلی میں پینے کا پانی تقریبا ختم ہو گیا ہے کیونکہ مظاہرین نے مونک نامی نہر کو بند کر دیا ہے جہاں سے دہلی کو پینے کا پانی سپلائی ہوتاہے۔

انھوں نے کہا ’ہریانہ کی تحریک کی وجہ سے دہلی کو پانی نہیں مل رہا ہے۔ اس کی وجہ سے ٹریٹمنٹ پلانٹ میں بھی پانی تقریبا ختم ہو گیا ہے۔‘

اسی سبب پیر کو دہلی کے تمام سکول کے بند رہنے کا اعلان کیا گيا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption ریاست ہریانہ میں یہ تشدد جاٹ برادری کے ریزرویشن تحریک سے شروع ہوا

بھارتی ریاست ہریانہ میں یہ تشدد جاٹ برادری کی ریزرویشن تحریک سے شروع ہوا۔

ہریانہ کے ریاستی دارالحکومت چنڈی گڑھ میں موجود مقامی صحافی سنجے شرما نے ایڈیشنل چیف سیکریٹری پی کے داس کے حوالے سے بتایا ہے کہ جھجّر میں فوج اور مظاہرین کے درمیان ہونے والے تصادم میں سات افراد مارے گئے ہیں جبکہ کیتھل ضلعے میں دو گروہوں کے درمیان ہونے والے جھگڑے میں ایک شخص ہلاک ہو گیا ہے۔

اس سے قبل ایک شخص جمعے کو روہتک میں پولیس فائرنگ میں ہلاک ہو گیا تھا۔

ہریانہ میں موجود بی بی سی کےنامہ نگار سلمان روی نےبتایا کہ احتجاج کرنے والے جاٹوں نےساری ریاست کی ناکہ بندی کر رکھی ہے اور ریاست کو دوسرے ملک سے ملانے والی شاہراہوں اور ریلوے لائنوں کو بند کر دیا گیا ہے۔

تشدد سے متاثرہ علاقوں میں سنیچر کو کرفیو کے باوجود مظاہرین سڑکوں پر آ گئے جبکہ روہتک اور جند میں مظاہرین نے پولیس کی گاڑیوں، سرکاری، نجی املاک اور بسوں کو نذرِآتش کر دیا۔

بھارت کی سرکاری خبر رساں ایجنسی پی ٹی آئی نے حکام کے حوالے سے بتایا ہے کہ جھجھر میں جاٹ برادری کے مظاہروں کے دوران فائرنگ اور املاک کو آگ لگانے کی کوشش کو روکنے کے لیے مسلح افواج کی فائرنگ سے پانچ افراد ہلاک ہو گئے۔

اسی بارے میں