’شہریوں کو نشانہ بنانے والوں کے ساتھ امن مذاکرات نہیں کریں گے‘

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption پاکستان اور افغاستان کے حکام نے کہا تھا کہ کابل حکام اور طالبان عسکریت پسندوں کے درمیان مارچ کے آغاز میں براہِ راست مذاکرات شروع ہوں گے

افغانستان کے صدر اشرف غنی نے کہا ہے کہ افغانستان کے عام شہریوں کو نشانہ بنانے والوں کے ساتھ ان کی حکومت امن مذاکرات نہیں کرے گی۔

انھوں نے یہ بیان درالحکومت کابل اور صوبہ کنڑ کے صوبائی درالحکومت اسد آباد میں ہونے والے دو خود کش بم دھماکوں میں کم از کم 26 افراد کی ہلاکت کے بعد دیا۔

ان حملوں میں 50 سے زیادہ افراد زخمی بھی ہوئے۔ مرنے اور زخمی ہونے والوں میں زیادہ تعداد عام شہریوں کی تھی۔

اس سے قبل ہونے والے ایک حملے کی ذمہ داری طالبان نے قبول کی تھی۔

گذشتہ ہفتے کے آغاز میں پاکستان اور افغاستان کے حکام نے کہا تھا کہ کابل حکام اور طالبان عسکریت پسندوں کے درمیان مارچ کے آغاز میں براہِ راست مذاکرات شروع ہوں گے۔

لیکن کابل اور کنڑ میں ہونے والے ان تازہ حملوں کے بعد افغان صدر نے غمِ عضے کا اظہار کرتے ہوئے مذاکرات سے انکار کر دیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption گذشتہ سال افغان فورسز نے کنڑ میں طالبان کے خلاف کئی اہم آپریشن کیے

سنیچر کو کابل میں خود کش بم حملہ وزارت دفاع کی عمارت کے سامنے ہوا جس میں حکام کےمطابق 12 افراد ہلاک اور آٹھ زخمی ہوگئے ہیں۔

کابل میں ہونے والے خود کش دھماکے سے کچھ گھنٹے پہلے صوبہ کنڑ کے صوبائی دارالحکومت اسد آباد میں گورنر ہاؤس کے قریب ہونے والے خود کش بم حملے میں افغان ملیشیا کمانڈر سمیت کم از کم 14 افراد ہلاک اور 40 افراد زخمی ہو گئے ہیں۔

خود کش حملہ سنیچر کے روز پاکستان کی سرحد کے قریب افغانستان کے مشرقی صوبے کنڑ میں ہوا ہے۔

صوبائی گورنر وحید اللہ کلیم زئی نے خبر رساں ادارے روئٹرز کو بتایا کہ بمبار ایک موئٹرسائیکل پر سوار تھا اور اسد آباد میں ایک سرکاری دفتر کے سامنے جاکر اس نے خود کو دھماکے سے اڑا لیا۔

انھوں نے بتایا کہ مرنے والے زیادہ افراد عام شہری اور بچے ہیں جو یا تو ادھر سے گزر رہے تھے یا پھر پارک میں کھیل رہے تھے۔

حملے کی فوری وجہ نہیں معلوم ہو سکی ہے اور نہ ہی کسی نے ذمے داری لی ہے۔ تاہم اس حملے میں ایک قبائلی سردار اور ملیشیا کمانڈر حاجی خان جان کی موت ہو گئی ہے۔

خیال رہے کہ وہ گذشتہ سال سے طالبان کے خلاف کئی کارروائیوں میں شامل رہے تھے۔

دریں اثنا کنڑ میں دولت اسلامیہ کی سرگرمیاں بھی نظر آئی ہیں تاہم ہمارے نامہ نگار کے مطابق انھیں کئی جانب سے مزاحمت اور مخالفت کا سامنا ہے۔

Image caption یہ حملہ اسعد آباد میں ہوا ہے

اسی بارے میں