بھارت کا پاکستان پر ’غیر ریاستی عناصر‘ کی مدد کا الزام

تصویر کے کاپی رائٹ AP

بھارت کے وزیر دفاع منوہر پاریکر نے کہا ہے کہ پٹھان کوٹ ایئر بیس پر حالیہ حملہ پاکستان سے آنے والے ’غیر ریاستی عناصر‘ نے کیا تھا اور ’غیر ریاستی عناصر‘ حکومت کی اعانت کے بغیر یہ کارروائی نہیں کر سکتے ہیں۔

بھارتی وزیر دفاع نے یہ بات منگل کو پارلیمان کے ایوان بالا میں ایک سوال کے جواب میں کہی۔

بی جے پی کی اتحادی جماعت شیو سینا کے رہنما سنجے راؤت نے منوہر پاریکر سے پوچھا تھا کہ کیا یہ حملہ صرف ’غیر ریاستی عناصر‘ نے کیا تھا یا انھیں پاکستانی فوج کی حمایت بھی حاصل تھی۔

اس کے جواب میں منوہر پاریکر نے کہا ’غیر ریاستی عناصر تو یقینی طور پر ملوث تھے لیکن کوئی بھی غیر ریاستی عناصر حکومت کی اعانت کے بغیر یہ کارروائی نہیں کرسکتا تاہم انھوں نے کہا کہ مکمل تفصیلات نیشنل انویسٹی گیشن ایجنسی کی تفتیش سے سامنے آ جائیں گی۔‘

یہ بات واضح نہیں ہے کہ سٹیٹ کی اعانت سے ان کی کیا مراد تھی کیونکہ ماضی میں بھی حکومت کا یہ موقف رہا ہے کہ آئی ایس آئی یا اس کے ایک حلقے کی اعانت کے بغیر سرحد پار سے حملے ممکن نہیں ہیں۔

پٹھان کوٹ ایئر بیس پر حملے کے بعد سے دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کی بحالی کا سلسلہ ایک مرتبہ پھر رک گیا ہے اور بھارتی حکومت فی الحال اس انتظار میں ہے کہ حملے میں مبینہ طور پر ملوث افراد کے خلاف کارروائی کی جا رہی ہے یا نہیں۔

بھارتی حکومت کا الزام ہے کہ یہ حملہ جیش محمد نے کیا تھا لیکن حملے کے بعد حکومت نے کافی محتاط زبان استعمال کی ہے اور اگر پاریکر کا مطلب یہ تھا کہ حملہ آوروں کو حکومت پاکستان کی حمایت حاصل تھی، تو یہ پہلی مرتبہ ہوگا کہ اس نے پٹھان کوٹ کے حملے کے سلسلے میں براہ راست حکومت پاکستان کا نام لیا ہو۔

اسی بارے میں