سکھوں کے قتل میں ملوث 47 پولیس اہلکاروں کو عمر قید

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption بھارتی پولیس پر جعلی انکاؤنٹرز کے الزامات لگتے رہے ہیں

بھارتی ریاست اتر پردیش کے پیلی بھیت ضلعے میں 25 سال پہلے ہونے والے ایک مبینہ تصادم میں دس سکھ زائرین کی ہلاکت پر خصوصی عدالت نے 47 پولس اہلکاروں کو عمر قید کی سزا سنائی ہے۔

12 جولائی سنہ 1991 کو پولیس نے دس سکھ زائرین کو شدت پسند قرار دیتے ہوئے مبینہ تصادم میں ہلاک کر دیا تھا۔ بھارتی تفتیشی ادارے سی بی آئی کی خصوصی عدالت کے جج للّو سنگھ نے اس تصادم پر کئی طرح کے سوال اٹھاتے ہوئے اسے فرضی قرار دیا ہے۔

کسی ایک معاملے میں اتنے پولیس اہلکاروں کو عمر قید کی سزا کا شاید یہ ملک میں پہلا واقعہ ہے۔

مبصرین کا کہنا ہے کہ بھارت میں پولیس مقابلے ایک حد تک انصاف کے سست اور الجھے ہوئے نظام کا نتیجہ ہیں۔ عام طور پر ایسے معاملات میں سماعت میں مسلسل تاخیر اور پھر گواہان کا اپنی پہلی گواہیوں سے پھر جانے کی وجہ سے کیس ختم ہو جاتے ہیں۔

پیلی بھیت میں 12 جولائی 1991 کو پٹنہ صاحب اور کچھ دوسرے مقامات سے سکھ زائرین ایک بس سے واپس آ رہے تھے۔ بس میں 25 مسافر سوار تھے جس میں سے چند لوگوں کو جبراً اتار لیا گیا۔ اس کے بعد مزید پولیس اہلکار وہاں آ گئے اور انھوں نے ان لوگوں کو کئی گروہوں میں منقسم کر لیا اور جنگل کی جانب لے گئے جہاں انھیں گولی مار کر ہلاک کر دیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption سکھ زائرین کو 25 سال قبل ایک بس سے اتارا گیا تھا

اس کے بعد انھوں نے جھوٹی کہانیاں تیار کیں۔ پولیس نے اپنی ایف آئی آر میں ان سب کو شدت پسند قرار دیتے ہوئے پولیس پر حملہ کرنے کا الزام لگایا لیکن بعد میں مارے جانے والے لوگوں کے وارثوں نے اس تصادم کو فرضی قرار دیا تھا۔

خیال رہے کہ اس زمانے میں سکھ تنظیمیں علیحدہ ملک کے لیے جنگ کر رہی تھیں۔

15 مئی 1992 کو سپریم کورٹ نے اس معاملے میں دائر پٹیشن کی سماعت کرتے ہوئے سی بی آئی کو جانچ کا حکم دیا تھا۔ سی بی آئی نے اس معاملے میں 57 پولیس اہلکاروں کو ملزم ٹھہرایا تھا جن میں سے دس کی مقدمے کی سماعت کے دوران موت ہو گئي۔

25 سال پہلے ہونے والے اس واقعے پر لکھنے والے سینیئر صحافی اروند سنگھ کہتے ہیں کہ اس وقت کلیان سنگھ حکومت نے معاملے میں ملزم بنائے جانے والے پولیس اہلکاروں کو بچانے کی ہر ممکن کوشش کی اور اس کے بعد جن جماعتوں کی بھی حکومتیں آئیں انھوں نے بھی اس کوشش کو جاری رکھا۔

اس وقت ریاست میں بی جے پی کے کلیان سنگھ کی حکومت تھی اور اس نے پیلی بھیت کے اس وقت کے پولیس سپرنٹینڈنٹ آر ڈی ترپاٹھی سمیت مبینہ تصادم میں شامل تمام پولیس اہلکاروں کی تعریف کرتے ہوئے انھیں انعام و اکرام سے نوازا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اس وقت بعض سکھ تنظیمیں علیحدہ ملک کے حصول کے لیے مسلح تحریک چلا رہی تھیں

اس واقعے سے منسلک سابق رکن اسمبلی اور کسان رہنما وي ایم سنگھ کہتے ہیں کہ 90 کی دہائی میں سکھ انتہا پسندی کو روکنے میں ناکام پولیس والوں نے ایسے بہت سے معصوم سکھوں کو پریشان کیا۔

جعلی مقابلے میں ہلاک کیے جانے والے سکھوں کے رشتہ داروں نے عدالت کے باہر مظاہرہ کیا اور ان کا کہنا تھا کہ پولیس والوں کے ساتھ نرمی برتی گئی ہے کیونکہ ان کے مطابق انھیں سزائے موت ہونی چاہیے تھی۔

اسی بارے میں