بھارت کی جنوبی ریاستوں میں گرمی سے 80 افراد ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption گذشتہ برس ان دونوں ریاستوں میں شدید گرمی کی وجہ سے دو ہزار افراد ہلاک ہو گئے تھے

بھارت کی جنوبی ریاستوں تیلنگانہ اور آندھرا پردیش میں شدید گرمی کے نتیجے میں کم از کم 80 افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

ان ریاستوں میں اپریل کے مہینے میں معمول کی بارشوں میں تاخیر کی وجہ سے بعض علاقوں میں درجہ حرارت 45 ڈگری تک پہنچ گیا ہے۔

تاہم حکام کے مطابق ریاستیں گرمی کی لہر سے متاثرہ نہیں ہیں اور اس وقت درجہ حرارت میں ہونے والا اضافہ غیر معمولی نہیں ہے۔

خیال رہے کہ گذشتہ برس ان دونوں ریاستوں میں شدید گرمی کی وجہ سے دو ہزار افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

آفات سے نمٹنے کے ادارے کے حکام نے بی بی سی کے عمران قریشی کو بتایا ہے کہ دونوں ریاستوں میں جمعرات کی شام تک ہلاکتوں کی تعداد 80 ہو گئی ہے اور آئندہ تین دنوں تک یہ تعداد 100 تک پہنچ سکتی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption حکام نے لوگوں سے زیادہ سے زیادہ پانی استعمال کرنے کا کہا ہے

حکام نے عوام سے درخواست کی ہے کہ وہ دھوپ میں جانے سے گریز کریں اور دوپہر 12 بجے سے چار بجے سے گھروں سے باہر نکلنے سے اجتناب کریں اور پانی کا استعمال زیادہ سے زیادہ کریں۔

محکمۂ موسمیات کا کہنا ہے کہ درجہ حرارت میں مزید پانچ ڈگری اضافہ ہونے کے بعد ہی دونوں ریاستوں میں گرمی کی شدید لہر کا اعلان کیا جا سکتا ہے۔

تیلنگانہ کے دارالحکومت حیدر آباد میں محکمۂ موسمیات کے ڈائریکٹر جنرل نرسیما راؤ نے بتایا کہ اس وقت درجہ حرارت میں مزید اضافہ کا امکان نہیں ہے۔ درجہ حرارت 40 سے 42 ڈگری کے درمیان ہے اور اپریل میں موسم کے حوالے سے تبدیلی صرف یہ ہے کہ معمولی کی بارشیں نہیں ہو سکی ہیں۔

اسی بارے میں