انڈیا میں آسمانی بجلی کی زد میں آ کر 79 افراد ہلاک

Image caption بھارت میں تقریباً ہر برس 2000 افراد آسمانی بجلی گرنے کے واقعات میں ہلاک ہو جاتے ہیں

انڈیا میں حکام کے مطابق ملک کی تین ریاستوں میں آسمانی بجلی گرنے کے واقعات میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد 79 ہوگئی ہے۔

حکام کا کہنا ہے کہ سب سے زیادہ ہلاکتیں ریاست بہار میں ہوئیں جہاں 53 افراد مارے گئے۔

اس کے علاوہ جھارکھنڈ میں 10 افراد جبکہ مدھیہ پردیش میں 16 افراد ہلاک ہوئے۔

ریاست بہار میں قدرتی آفات سے نمٹنے کے ادارے کے مطابق آسمانی بجلی گرنے کے واقعات منگل کو نو مختلف اضلاع میں پیش آئے۔

حکام کے مطابق سب سے زیادہ ہلاکتیں ضلع پٹنہ میں ہوئیں جہاں ایک واقعے میں چھ افراد ہلاک ہو گئے۔

اطلاعات کے مطابق زیادہ افراد آسمانی بجلی کے نتیجے میں اس وقت ہلاک ہوئے جب وہ موسمی بارشوں کے دوران کھیتوں میں کام کر رہے تھے۔

بھارت میں مون سون کی بارشوں کے دوران آسمانی بجلی گرنے کے واقعات عام ہیں۔

بھارت میں ہلاکتوں کا ریکارڈ رکھنے والے قومی ادارے کے مطابق بھارت میں 2005 سے ہر برس ایسے واقعات میں تقریباً دو ہزار افراد ہلاک ہو جاتے ہیں۔

بھارت کے علاوہ اس کے پڑوسی ملک بنگلہ دیش میں بھی آسمانی بجلی گرنے کے نتیجے میں ہلاکتوں کے واقعات میں اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔

گذشتہ برس ماہرین کا خیال تھا کہ ترقی پذیر ممالک میں آسمانی بجلی گرنے کے واقعات اور اس سے ہلاک اور زخمی ہونے والوں کی تعداد میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے۔

بعض سائنسدانوں کا خیال ہے کہ عالمی سطح پر درجۂ حرارت بڑھنے سے آسمانی بجلی گرنے کے وقعات میں مزید اضافہ ہو سکتا ہے۔

اسی بارے میں