بنگلہ دیش میں ایک اور ہندو پنڈت قتل

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption گذشتہ ماہ بھی بنگلہ دیش میں ایک ہندو پنڈتکا کا قتل ہوا تھا

بنگلہ دیش میں پولیس کے مطابق ایک ہندو پنڈت کو نامعلوم افراد نے قتل کر دیا ہے۔

اطلاعات کے مطابق ہیلمنٹ پہنے تین موٹر سائیکل سواروں نے 45 سالہ ہندو پنڈت شے مناندہ داس باباجی مہاراج پر حملہ کیا۔

٭بنگلہ دیش میں اسلامی شدت پسندوں کے خلاف کارروائی

خبر رساں ادارے اے ایف پی نے ضلعی نائب پولیس چیف گوپی ناتھ کانجی لال کے حوالے سے لکھا ہے کہ ہندو پنڈت شے مناندہ داس باباجی مہاراج کی ہلاکت کا واقعہ جمعے کو ضلع جینائدہ میں پیش آیا۔

ہندو پنڈت اس وقت مندر میں صبح کی عبادت کی تیاری کر رہے تھے کہ تین نوجوان موٹرسائیکل پر آئے اور ان کی گردن پر چاقوں سے وار کیے۔

خیال رہے کہ خود کو دولتِ اسلامیہ کہلانے والی شدت پسند تنظیم نے حالیہ عرصے میں بنگلہ دیش میں ہونے والے قتل کے واقعات کی ذمہ داری قبول کی ہے۔ تاہم وزارتِ داخلہ ملک میں دولتِ اسلامیہ کی موجودگی سے انکاری ہے اور ان واقعات کا الزام مقامی شدت پسند گروہ پر عائد کرتی ہے۔

پولیس کا کہنا ہے کہ ہندو پنڈت کے قتل کے محرکات واضح نہیں ہیں۔ لیکن مقامی پولیس سٹیشن کے چیف انسپکٹر حس حافظ الرحمن نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا ہے کہ حالیہ قتل کی واردات مقامی اسلامی شدت پسندوں کے حملوں سے ملتی جلتی ہے۔

حکومت نے کہا ہے کہ وہ شدت پسندوں کے خلاف مہم چلا رہی ہے اور اب تک ہزاروں افراد کو گرفتار کیا گیا ہے۔

رواں ہفتے ہی بنگلہ دیشی پولیس نے اٹلی کے ایک امدادی کارکن کی ہلاکت کے مقدمے میں سات افراد کو سزا دی تھی۔

اسی بارے میں