انڈیا: اترپردیش میں زہریلی شراب پینے سے 19 ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ Prashant Dayal
Image caption ریات گجرات میں بھی شراب نوشی پر پابندی ہے

انڈیا کی ریاست اترپر پردیش کے ایٹا ضلع میں زہریلی شراب پینے سے کم از کم 19 افراد کی ہلاکت ہو گئی ہے اور پولیس حکام کا کہنا ہے کہ چھ افراد اپنی بینائی بھی کھوبیٹھے ہیں۔

ریاست اتر پردیش کے سینیئر پولیس اہلکار اجے شنکر رائے کے مطابق زہریلی شراب پینے سے مزید پچاس افراد کی طبیعت خراب ہوئی ہے۔

ادھر انڈیا کے سرکاری خبر رساں ادارے کے مطابق اس واقعے میں مرنے والوں کی تعداد 21 ہوگئی ہے۔

متاثرہ افراد کا مقامی ہسپتالوں میں علاج کیا جا رہا ہے اور بہت سے لوگوں کی حالت اب بھی تشویشناک ہے۔

پولیس کا حکام کے بقول زہریلی شراب سے متاثر ہونے والے افراد کی تعداد میں اضافہ ہوسکتا ہے۔

پولیس کے مطابق جمعے شب ایٹا ضلع کے علاقے علی گنج میں لوگوں نے ایک دوکان سے یہ شراب خریدی تھی اور اس کو پینے کے فوراً بعد لوگوں کی حالت خراب ہونا شروع ہوگئی۔

پولیس حکام نے اس سلسلے ایک ملزم کو گرفتار کیا ہے اور ریاستی حکومت نے لاپرواہی برتنے کے الزام میں متعدد افسران اور ملازمین کو معطل کر دیا ہے۔

غیرقانونی شراب انڈیا میں ایک بہت بڑا اور منافع بخش کاروبار ہے۔ اس کاروبار میں ملوث افراد خفیہ مقامات پر شراب تیار کرتے ہیں۔

اس شراب کی آمدنی پر کسی قسم کا کوئی ٹیکس بھی نہیں دیا جاتا۔

یاد رہے کہ گزشتہ سال اترپردیش کے ہی شہر لکھنؤ کے قریب واقع ایک علاقے میں زہریلی شراب پینے سے 35 افراد کی موت ہو گئی تھی۔

اسی بارے میں