یہ سب کشمیر پر چُپ کیوں ہیں؟

تصویر کے کاپی رائٹ FACEBOOK

پاکستان میں فیس بک کے ایک پیج ’نیور فورگیٹ پاکستان‘ نے کشمیر میں انڈین سکیورٹی فورسز کی جانب سے پیلٹ گن کے استعمال پر رائے عامہ اجاگر کرنے کے لیے ایک مہم کا آغاز کیا ہے۔

فیس بک پر اس مہم کے لیے بنائے گئے پوسٹرز میں مشہور انڈین شخصیات کی تصاویر کو فوٹوشاپ کی مدد سے ایسا دکھایا گیا ہے جیسے انھیں پیلٹ گن سے نکلنے والے چھرّوں نے زخمی کیا ہو۔

٭کشمیر سینسر شپ پر فیس بک پر کڑی تنقید

ان تصاویر میں انڈیا کے وزیراعظم نریندر مودی، کانگریس کی رہنما سونیا گاندھی، فیس بُک کے بانی مارک زکربرگ ، بالی وڈ سپر سٹار شاہ رخ خان اور امیتابھ بچن سمیت اور کئی دوسرے افراد شامل ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ FACEBOOK

جب اس مہم کے پیچھے کارفرما جبران ناصر سے بی بی سی نے رابطہ کیا تو انھوں نے بتایا کہ ‘سب سے پہلے ہم نے سنسرشپ کے حوالے سے رائے عامہ میں آگہی پیدا کرنے کے لیے مارک زکربرگ کا انتخاب کیا۔‘

جبران ناصر کے بقول ’فیس بُک کی حالت دیکھیں کہ وہ پیلٹ گن سے زخمی ہونے والی تصاویر اور کہانیوں کو سنسر کر رہی ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ facebook

ان پوسٹرز کے لیے فوٹوشاپ اور آرٹ کا کام بتول عقیل اور مرتضیٰ عباس نے کیا جبکہ ان پر لکھا مخصوص پیغام جبران ناصر کی تحریر ہے۔

ہر شخصیت كے انتخاب کی ایک وجہ ہے جیسے مودی چونکہ وزیراعظم ہیں اس لیے ان کا نام لازمی اس کا حصہ ہونا تھا، سونیا گاندھی کا انتخاب ان کی حکومت کی جانب سے عمر عبداللہ کو وزیراعلیٰ بنانے کے فیصلے کی وجہ سے کیا گیا جنھوں نے سب سے پہلے پیلٹ گن کےاستعمال کی اجازت دی۔

تصویر کے کاپی رائٹ FACEBOOK

چونکہ فلمی ستارے انڈیا میں بہت مقبول ہیں اور لوگ انھیں پوجتے ہیں اور ماضی میں فلمی ستارے اس طرح کے ایشوز پر اپنی رائے دیتے رہے ہیں۔ ان کی فلمیں کشمیر میں بکتی بھی ہیں اور ان کی فلمبندی بھی ہوتی ہے۔ مگر یہ سب کشمیر پر چُپ کیوں ہیں؟

تصویر کے کاپی رائٹ FACEBOOK

جبران ناصر نے اس مہم کے حوالے سے بتایا کہ ’میں سمجھتا ہوں کہ اس ڈیجیٹل دور میں کشمیر کی جدوجہد کے بارے میں آگہی پیدا کرنے کے لیے سب سے بہتر ہم یہ کر سکتے ہیں۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ FACEBOOK

جبران نے مزید کہا کہ ‘جس طرح مرضی ہم اپنی مہم کو بنائیں مگر یہ واضح ہونا چاہیے کہ ہم کسی کے آلہ کار نہ بنیں صرف مظلوم کی آواز آگے پہنچائیں اور ہم سب ایک بات پر متفق ہیں کہ کشمیریوں کو فیصلہ کرنے کا حق ملنا چاہیے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ FACEBOOK

یہ مہم کراچی سے شروع ہوئی مگر اس کے بعد ایک کشمیری نے انڈیا کے زیرِانتظام کشمیر کی وزیراعلیٰ محبوبہ مفتی کا پوسٹر بنا کر جبران ناصر کے ساتھ شیئر کیا جو اپنے حزبِ اختلاف کے دور میں پیلٹ گن کے استعمال کے خلاف تھیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ FACEBOOK

اسی بارے میں