آسام:علیحدگی پسند بوڈو قبائل کے حملے میں 13 ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption حکام نے علاقے میں ریڈ الرٹ جاری کرتے ہوئے رات کا کرفیو نافذ کر دیا ہے

بھارت کی شمال مشرقی ریاست آسام میں بوڈو قبائل سے تعلق رکھنے والے باغیوں کی فائرنگ سے کم از کم 13 افراد ہلاک اور 15 زخمی ہوگئے ہیں۔

پولیس کے مطابق یہ واقعہ لوئر آسام کے ضلعے کوکراجھار سے 40 کلومیٹر دور بالاجھار کے بازار میں جمعے کو پیش آیا جب شدت پسندوں نے بازار میں اندھا دھند گولیاں چلائیں۔

٭ آسام: علیحدگی پسند بوڈو قبائل کے حملوں میں 72 ہلاک

آل انڈیا ریڈیو نے آسام کے چیف سیکریٹری کے حوالے سے کہا ہے کہ حملے میں 13 شہری اور ایک شدت پسند مارا گیا ہے۔

کوکراجھار پولیس کا کہنا ہے کہ 15 زخمیوں میں سے شدید زخمیوں کو علاج کے لیےگوہاٹی بھیجا گیا۔

صوبے کے ڈی جی پی مکیش سہائے نے بی بی سی ہندی کے نامہ نگار سلمان راوی کو بتایا کہ شدت پسندوں اور پولیس کے درمیان تصادم بھی ہوا۔

انھوں نے کہا کہ سکیورٹی فورسز نے کالعدم نیشنل ڈیموکریٹک فرنٹ آف بوڈو لینڈ کے ایک شدت پسند کو ہلاک کر دیا جبکہ پانچ حملہ آور فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے۔

حکام کے مطابق حملے کے نتیجے میں قریب موجود دکانوں اور گھروں کو بھی نقصان پہنچا ہے۔

چائے کی کاشت کے لیے مشہور ریاست آسام کی سرحدیں بنگلہ دیش اور بھوٹان سے ملتی ہیں۔

یہاں مقامی بوڈو قبائل اور دیگر قبائل کے مابین زمین کی ملکیت پر اکثر جھگڑے ہوتے رہتے ہیں اور بوڈو عسکریت پسند مقامی قبائلیوں اور مسلمانوں کو نشانہ بناتے رہے ہیں۔

بوڈو قبائلیوں کی تنظیم این ڈی ایف بی عشروں سے علیحدہ ملک کا مطالبہ کر رہی ہے۔

اسی بارے میں