انڈیا: بلند شہر میں گینگ ریپ کے اہم ملزمان گرفتار

تصویر کے کاپی رائٹ unk
Image caption انڈیا کے دارالحکومت دہلی میں سنہ 2012 میں ہونے والے گینگ ریپ کے بعد اس کے متعلق قانون میں سختی لائی گئي تھی

انڈیا کی شمالی ریاست اترپردیش کے شہر بلند شہر میں ہونے والے گینگ ریپ کیس کے اہم ملزم سلیم باوریا کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔

ریاستی دارالحکومت لکھنئو میں مقیم صحافی سميرآتماج مشرا کو بلند شہر کے پولیس سپرنٹینڈنٹ انیس احمد انصاری نے بتایا کہ باوريا کو ان کے دو ديگر ساتھیوں کے ساتھ گرفتار کیا گیا ہے۔

٭انڈیا میں ریپ کے تین ملزمان کا ریمانڈ

ان گرفتاریوں کے ساتھ ہی اس معاملے میں گرفتار ملزمان کی تعداد چھ ہو گئی ہے۔

اس کیس کے تین ملزمان کو پولیس نے پہلے ہی گرفتار کرلیا تھا اور اب وہ عدالتی حراست میں ہیں۔

گذشتہ ماہ 29 جولائی کو دہلی سے کانپور جانے والے ہائی وے 95 پر کچھ مسلح افراد نے ایک گاڑی میں اپنے خاندان کے ساتھ سفر کرنے والی ماں بیٹی کے ساتھ بلند شہر میں اجتماعی ریپ کیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP GETTY
Image caption اجتما‏عی ریپ کے خلاف ملک گیر پیمانے پر مظاہرے ہوتے رہتے ہیں

اس کے بعد یہ معاملہ سرخیوں میں آ گیا تھا۔ حزب اختلاف کی جماعتوں نے اتر پردیش میں برسراقتدار سماج وادی پارٹی کی حکومت پر قانون اور نظام کی بالادستی کے ناکام ہو جانے کا الزام لگایا تھا۔

اس کے بعد ریاستی حکومت نے کارروائی کرتے ہوئے ضلع کے کئی سینیئر پولیس افسران کو معطل کر دیا تھا۔

الہ آباد ہائی کورٹ نے اس معاملے کا ازخود نوٹس لیتے ہوئے ریاستی حکومت سے اس معاملے کے متعلق سی بی آئی جانچ پر جواب داخل کرنے کے لیے کہا تھا۔

اس سے قبل بھی ریاست میں کئی بار ریپ کے واقعات پیش آئے ہیں اور حکومت کو تنقید کا نشانہ بنایا گيا ہے۔

انڈیا میں سنہ 2012 میں دارالحکومت دہلی میں ایک طالبہ کے چلتی بس میں ریپ کے بعد ملک بھر میں ریپ کے قوانین سخت کرنے کے بارے میں آواز اُٹھائی گئی تاہم اس کے باوجود ملک بھر میں خواتین اور بچوں کے خلاف جنسی حملوں کا سلسلہ جاری ہے۔

اسی بارے میں