کشمیر میں فوج کی تعداد بڑھانے پر غور

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

بھارت کی فوج کے سربراہ جنرل دلبیر سنگھ نے جمعہ کو بھارت کے زیر انتظام کشمیر کا دورہ کیا جبکہ تمام مقتدر بھارتی اخبارات نے خبر دی ہے کہ کشمیر میں بھارتی فوج کی تعداد میں اضافہ کیا جا رہا ہے۔

بھارت کی سرکاری خبر رساں ایجنسی پی ٹی آئی کے مطابق جنرل دلبیر سنگھ نے وادی کے ان چار اضلاع کا دورہ کیا جہاں گزشتہ دو ماہ سے شدید عوامی احتجاج کیا جا رہا ہے۔

جنرل سنگھ کو جنرل آفیسر کمانڈنگ آف چنار کور کے لیفٹیننٹ جنرل ستیش دو نے سکیورٹی صورت حال کے بارے میں تفصیلی بریفنگ دی۔ جنرل سنگھ نے لائن آف کنٹرول پر واقع فوج سرحدی چوکیوں کا بھی معائنہ کیا۔

پی ٹی آئی نے دفاعی ذرائع کے حوالے سے کہا کہ جنرل سنگھ نے وادی کےشمالی اور جنوبی حصوں میں فوجی دستوں سے بھی ملاقات کی۔

کشمیر سے موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق جمعہ کو وادی کے مختلف علاقوں میں جمعہ کی نماز کے بعد اجتجاج کے خدشات کے پیش نظر کئی جگہوں پر کرفیو میں سختی کر دی گئی ہے۔

کشمیر میں گزشتہ دو ماہ سے معمول کی زندگی مفلوج ہے اور عوامی احتجاج پر سکیورٹی فورسز کی فائرنگ اور طاقت کے استعمال میں اب تک تہتر شہری ہلاک ہو چکے ہیں۔

ایک پولیس اہلکار کے مطابق کشمیر میں انننتناگ، پلواما، کلگم، شوپیاں، پمپور، اوانتیپورا، ترل، بارامولا، پتن اور پلہالن کے علاوہ سری نگر کے چودہ پولیس اسٹشینوں کے علاقوں میں کرفیو میں سختی کر دی گئی ہے۔

اسی بارے میں