’روزگار کی تلاش میں ایران جانے پر مجبور‘

پاکستان کے صوبے بلوچستان میں امن وامان کی خراب صورتحال اور بےروزگاری کے باعث نوجوانوں کی ایک بڑی تعداد نے ہمسایہ ملک ایران کا رخ کرنا شروع کر دیا ہے۔

تاہم ایران جانے کے خواہشمند ان نوجوانوں کو ویزے کے حصول میں شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔

صوبائی دارالحکومت کوئٹہ میں واقع ایرانی قونصلیٹ کے سامنے ہر رات نوجوانوں کی ایک بڑی تعداد ویزہ کے حصول کے لیے جمع ہوجاتی ہے لیکن ان میں سے صرف چند ایک کو ہی اگلے دن صبح ویزہ ملتاہے۔

ان نوجوانوں کا کہنا ہے کہ رشوت دیے بغیر ویزے کا حصول مشکل ہوگیا ہے اور ایک ٹوکن کی قیمت چار سے آٹھ ہزار روپے وصول کی جا رہی ہے۔

ان کے مطابق حکومت انہیں روزگار دینے میں ناکام ہوچکی ہے جس کے باعث وہ روزگار کی تلاش میں ایران جانے پر مجبور ہیں۔

اسی بارے میں