سیز فائر کی نگرانی مبصر کریں گے

عرب لیگ اور اقوامِ متحدہ کے امن منصوبے کے تحت شام میں فائر بندی کا پہلا دن گزرنے کے بعد اقوامِ متحدہ اس سیز فائر پر عملدرآمد کی نگرانی کے لیے مبصرین شام بھیجنے کی تیاری کر رہی ہے۔

شام کے لیے عالمی ایلچی کوفی عنان نے شامی حکومت کی طرف سے فائربندی کا خیر مقدم کیا ہے تاہم ان کا کہنا ہے کہ شام نے ابھی تک چھ نکاتی امن معاہدے پر مکمل طور پر عمل نہیں کیا ہے۔

اقوامِ متحدہ کی سلامتی کونسل کے ارکان نے کوفی عنان کی شام میں مبصرین کی فوری تعیناتی کی تجویز کا خیرمقدم کیا ہے جبکہ شام کا کہنا ہے کہ وہ اقوامِ متحدہ کے مبصرین کو ملک میں کام کرنے کی اجازت دے گا۔

امریکی وزیرِ خارجہ ہلیری کلنٹن کا بھی کہنا ہے کہ شام میں فائربندی اہم پیشرفت ہے لیکن یہ صرف پہلا قدم ہے اور شام میں امدادی تنظیموں کو سرگرمیوں کی مکمل اجازت دی جانی چاہیے۔ ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ شام کے صدر بشار الاسد کو ’جانا ہی ہوگا‘۔