رمشاء کیس: مقامی مسجد کے امام گرفتار

آخری وقت اشاعت:  اتوار 2 ستمبر 2012 ,‭ 07:38 GMT 12:38 PST

پاکستان میں حکام کا کہنا ہے کہ پولیس نے اسلام آباد کے نواحی گاؤں میرا جعفر کی مقامی مسجد کے امام حافظ خالد جدون کو سنیچر کی شب گرفتار کر لیا گیا ہے۔ میرا جعفر میں رمشاء نامی چودہ سالہ عیسائی بچی کو توہینِ مذہب کے الزامات کا سامنا ہے۔

حافظ خالد جدون کے خلاف رمشاء کی گرفتاری کو ممکن بنانے کے لیے شواہد کو تبدیل کرنے کا الزام ہے۔

حافظ جدون کو اس وقت گرفتار کیا گیا ہے جب انہی کی مسجد کے نائب امام اور منتظم ملک زبیر نے ایک مقامی مجسٹریٹ کے سامنے سنیچر کو دیے گئے بیانِ حلفی میں اس بات کی گواہی دی تھی کہ حافظ جدون نے خود یہ قرآنی آیات رمشاء کے گھر سے آنے والے کوڑے میں ڈال دیں تھیں۔

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔