سپریم کورٹ سے خط کے مسودے کی منظوری

آخری وقت اشاعت:  بدھ 10 اکتوبر 2012 ,‭ 05:19 GMT 10:19 PST

پاکستان کی سپریم کورٹ نے این آر او عملدرآمد کیس میں وفاقی حکومت کی جانب سے سوئس حکام کو لکھے جانے والے خط کے تدوین شدہ مسودے کی منظوری دے دی ہے۔

بدھ کو جسٹس آصف سعید کھوسہ کی سربراہی میں پانچ رکنی بینچ نے اس مقدمے کی سماعت شروع کی تو وفاقی وزیرِ قانون فاروق ایچ نائیک نے عدالت میں مسودہ پیش کرتے ہوئے کہا کہ حکومت جمہوریت کا فروغ اور اداروں کا استحکام چاہتی ہے۔

جج صاحبان نے مسودے کا جائزہ لینے کے لیے عدالتی کارروائی کچھ دیر کے لیے روک دی اور اپنے چیمبرز میں چلے گئے۔

عدالت میں موجود ہمارے نامہ نگار کے مطابق جب کارروائی دوبارہ شروع ہوئی تو عدالت کا کہنا تھا کہ خط کا مسودہ این آر و قانون کی شق ایک سو اٹھہتر سے مطابقت رکھتا ہے۔

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔