رجسٹرار کا معاملہ پارلیمان کو بھیجنے کا فیصلہ

آخری وقت اشاعت:  منگل 18 دسمبر 2012 ,‭ 09:25 GMT 14:25 PST

قومی اسمبلی کی پبلک اکاؤنٹس کمیٹی نے سپریم کورٹ کے رجسٹرار ڈاکٹر فقیر حسین کا کمیٹی کے سامنے پیش نہ ہونے پر اُن کا معاملہ پارلیمنٹ کو بھیجنے کا فیصلہ کیا ہے۔

کمیٹی کے سربراہ ندیم افضل چن کا کہنا ہے کہ اگر آج سپریم کورٹ کے رجسٹرار کو استثنی دیا گیا تو کل دیگر ادارے بھی استثنیٰ مانگیں گے۔

پبلک اکاؤنٹس کمیٹی کے چیئرمین کا کہنا ہے کہ اگلے چند روز میں یہ معاملہ پارلیمنٹ کو بجھوا دیا جائے گا۔ اُنہوں نے کہا کہ پارلیمنٹ بالادست ہے اور ہم اس موقف سے پیچھے نہیں ہٹیں گے۔

ندیم افضل چن کا کہنا تھا کہ یہ کسی ادارے کے ساتھ لڑائی نہیں ہے بلکہ آئین کی پاسداری کا معاملہ ہے۔

قومی اسمبلی کی پبلک اکاؤنٹس کمیٹی نے سپریم کورٹ کے کھاتوں کا آڈٹ کروانے کے لیے سپریم کورٹ کے رجسٹرار ڈاکٹر فقیر حسین کو متعدد بار کمیٹی کے سامنے پیش ہونے کو کہا ہے لیکن سپریم کورٹ رجسٹرار آفس کی طرف سے بیان جاری ہوتا رہا ہے کہ وہ کمیٹی کے سامنے پیش نہیں ہوں گے۔

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔